بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 21 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

امام کی تقلید اور خواتین کے لیے نماز میں چہرہ چھپانے کا حکم


سوال

1۔ اگرکوئی شخص مستقل طورپرایسی جگہ رہائش اختیارکرلےجہاں أئمہ اربعہ میں سےکسی اورکی تقلید ہوتی ہوتوکیااسےاپنی فقہ چھوڑکروہ اختیارکرلینی چاہئے؟ جیسے شافعی فقہ وغیرہ۔2۔ عورتوں کوسفرمیں کوئی ایسی جگہ میسرنہ ہوجہاں پردے کاصحیح انتظام ہوتوچہرہ ہاتھ اورپاؤں دیکھنےکی صورت میں نمازدرست ہوگی؟

جواب

۔ امام کی تقلید کررہاہےاسی پرکاربندرہے اس کو چھوڑنا جائزنہیں۔ 2۔ چہرے کاچھپانانمازکےلیےکوئی مفسدنہیں، لہذا چہرےکوچھپایا جائے، ہتھیلیاں اورپاؤں کھلےہوں تونمازہوجائیگی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143101200439

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے