بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

10 ذو القعدة 1445ھ 19 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

ہندوؤں کے مخصوص لفظ اوم بولنے کا حکم


سوال

اگر لفظ 'اوم' جو ہندو بولتے ہیں، بولاجائے تو کیا وہ حرام ہے؟

جواب

لفظ "اوم" (جو کہ ہندوؤں کے تین معبودوں کا نام ہے) ہندوؤں کا مذہبی شعار ہے، اس لیے مسلمانوں کے لیے مذکورہ لفظ کہنا جائز نہیں ہے۔

سنن أبو داود میں ہے:

"عن ابن عمر، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:، ‌من ‌تشبه ‌بقوم فهو منهم."

(‌‌أول كتاب اللباس، باب في لبس الشهرة، ج: 6، ص: 144، رقم: 4031، ط: دار الرسالة العالمية)

عمدۃ القاری میں ہے:

"نهى الله تعالى المؤمنين أن يشتبهوا بالكافرين في مقالهم وفعالهم."

(كتاب تفسير القرآن، باب: قوله تعالى: {فلا تجعلوا لله أندادا وأنتم تعلمون}، ج: 18، ص: 86، ط: إحياء التراث العربي)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144503100320

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں