بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

2 ذو الحجة 1443ھ 02 جولائی 2022 ء

دارالافتاء

 

’’حمد‘‘ کو میم مفتوح کے ساتھ پڑھنا


سوال

کیا ’’حمد‘‘ کو میم مفتوح  اور دال ساکن کے ساتھ پڑھ سکتے ہیں ؟اور پھر اس کے معنی کیا ہوں گے؟

جواب

’’حمد‘‘م کے سکون کے ساتھ مصدر ہے ،اور اس کے  معنی تعریف کے ہیں۔میم کے فتحہ اور دال کے سکون کے ساتھ ’’حَمَدْ‘‘پڑھنا غلط ہے، اور عربی زبان میں یہ مستعمل نہیں ۔

مصباح اللغات،ص؛۱۷۴،ط:مکتبہ قدوسیہ لاہور۔

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144311100801

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں