بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 رجب 1444ھ 28 جنوری 2023 ء

دارالافتاء

 

حالتِ بیداری میں نبی صلی اللہ علیہ و سلم کی زیارت یا ملاقات ممکن ہے یا نہیں؟


سوال

کیا حالتِ بیداری میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت یا ملاقات ہو سکتی ہے؟

جواب

جامعہ کے سابقہ فتاویٰ میں اسی طرح کے ایک سوال کے جواب میں مفتی محمد عبد السلام چاٹ گامی صاحب رحمہ اللہ تحریر فرماتے ہیں:

’’عالمِ بیداری میں حضورِ اکرم ﷺ کو دیکھنا، جب کہ ﷺ وفات پاچکے ہیں، قرآن و سنت سے ثابت نہیں، جب عالمِ بیداری میں آپ ﷺ کے شرفِ زیارت کا ثبوت قرآن و سنت سے نہیں، اس پر دلیل قائم کرنے کی ضرورت نہیں، عالمِ بیداری میں دیکھنا ناممکن بات بھی نہیں، اور جو عالمِ بیداری میں حضور ﷺ کو دیکھنے یا حضور ﷺ سے ملاقات، بات چیت کرنے کا دعویٰ کرتا ہے، نا ممکن کا دعویٰ نہیں کرتا۔

الجواب صحیح                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                             کتبہ

محمد یوسف بنوری عفا اللہ عنہ                                                                                                                                                                                            محمد عبدالسلام (23/ محرم الحرام 1394ھ)‘‘

محدّث العصر حضرت مولانا محمد یوسف بنوری نور اللہ مرقدہ نے اس جواب کی تصحیح  کے ساتھ ساتھ  اس پر نوٹ لکھا ہے، جو مِن و عَن نقل کیا جاتاہے:

’’میری رائے میں صحیح جواب یہ ہے:

عالمِ بیداری میں حضور ﷺ کو دیکھنا ممنوع نہیں، حدیث یا فقہ میں اس کی ممانعت نہیں، بلکہ ایک حدیث میں ایسا اشارہ ملتا ہے کہ جس نے خواب میں مجھے دیکھا تو (ہوسکتاہے کہ) بیدای میں بھی دیکھ لے۔

اربابِ قلوب اور اہلِ تصوّف کے یہاں تو یہ چیز تواتر کو پہنچی ہے کہ آں حضرت ﷺ اور بعض اَکابر کی زیارت بیداری میں ہوتی رہتی ہے، اگرچہ بیداری کی رؤیت "مثالی رؤیت"  ہے، عالمِ شہادت کی رؤیت نہیں، ورنہ ہر شخص اس وقت دیکھتا، بلکہ خاص مثالی رؤیت ہے، عالمِ مثال کی مثال بھی خواب جیسی ہے۔ البتہ جو خواب میں دیکھ لے وہ "رؤیا" کہلائے گا، اور جو بیداری میں ہوگی وہ "رؤیت" ہوگی۔

ہاں! ضرور خیال رہے کہ اس رؤیت میں ضروری نہیں کہ مرئی (جن کو دیکھا جاتاہے اس) کو علم و خبر ہو، یا اس کے تصرّف و قدرت کو دخل ہو، جیسے خواب میں کسی کو دیکھتا ہے کہ جس کو خواب میں دیکھا یہ حق تعالیٰ کی طرف سے ہے، اس شخص کے ارادے و قدرت، بلکہ علم کو بھی دخل نہیں، اور  چوں کہ رؤیت مثالی ہوتی ہے، اس لیے ایک وقت میں متعدد اَشخاص متعدد مقامات میں دیکھ سکتے ہیں۔ زیادہ تفصیل کا یہ موقع نہیں۔

محمد یوسف بنوری‘‘

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109202524

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں