بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ذو الحجة 1442ھ 29 جولائی 2021 ء

دارالافتاء

 

گھر سے اشیاء کا غائب ہونا


سوال

پچھلے کچھ عرصہ سے میری ذاتی چیزیں گھر سے غائب ہو جاتی ہیں اور کبھی واپس نہیں ملتیں، چیزیں عام استعمال کی ہوتی ہیں جیسا کہ بالوں کا تیل ، ہاتھوں کی کریم، کوئی منہ پہ لگانے کا ماسک وغیرہ ،لیکن اب یہ مسئلہ اتنا بڑھ گیا ہے کہ میں نے چیزیں استعمال کرنا چھوڑ دیں ،بار بار نہیں خرید سکتی ، پیسے الماری میں رکھ کر چابی اپنے پاس رکھی ، ان میں سےکچھ پیسے غائب ہوگئے ، کسی عامل ، پیر وغیرہ کو نہیں جانتی کہ حساب کرا سکوں ، کیا مجھے میرے کھوئے  پیسے واپس مل سکتے ہیں؟

جواب

اس ویب سائٹ کے ذریعہ شرعی مسائل کاحل بتلایاجاتاہے،عملیات  وغیرہ کے حوالے سے راہ نمائی نہیں کی جاتی۔

البتہ  چند حفاظتی اقدامات  ذکر کیے جاتے ہیں ،امید ہے کہ  ان پر عمل کرنے سے  آپ کی پریشانی دور ہوجائے گی۔  اور ان کے ذریعہ ہر قسم کی مخلوق کے شر سے حفاظت ہوگی، مثلاً:

1- گھر اور کمروں کے دروازے  نیز الماری، پرس وغیرہ (جہاں  اشیاء رکھتے ہیں) بند کرتے وقت بھی ’’بسم اللہ الرحمٰن الرحیم‘‘  پڑھا کریں۔

2-  صبح وشام اور رات کو سوتے وقت اور رقم وغیرہ رکھتے وقت آیۃ الکرسی پڑھنے کا اہتمام کریں۔

3- صبح و شام کی دعائیں جو عام کتابچوں میں مل جاتی ہیں ان کا معمول بنالیں۔

4- قیمتی سامان جہاں بھی رکھیں وہاں کسی پرچی پر ’’فَاللهُ خَیْرٌ حَافِظًا وَّهُوَ أَرْحَمُ الرَّاحِمِیْنَ‘‘ لکھ کر رکھ دیجیے۔

5-گھر میں سورہ بقرہ کی قدرے آواز سے تلاوت کا معمول بنالیا جائے۔ 

نیز  گم شدہ  اشیاء کی واپسی کے لیے درج ذیل وظائف پڑھنا مجرب ہے:

'' إِنَّاللِّٰهِ وَإِنَّا إِلَیْهِ رَاجِعُوْنَ'' کثرت سے پڑھنا .
"اَللّٰهُمَّ رَادَّ الضَّالةِ وَهَادِيَ الضَّالةِ أَنْتَ تَهْدِيْ مِنَ الضَّلَالَةِ ، اُرْدُدْ عَلَيَّ ضَالَّتِيْ بِقُدْرَتِكَ وَ سُلْطَانِكَ فَإِنّهَا مِنْ عَطَائِكَ وَفَضْلِكَ."  ( حصن حصین )اس دعا کو کثرت سے پڑھنا۔

3۔ سورۃ الشمس (یعنی والشمس وضحٰها) یا سورۃ الضحیٰ (یعنیوالضحى والیل اذا سجى)   کثرت سے پڑھنا بھی مفید ہوگا۔ ان شاء اللہ!

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144212200299

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں