بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

23 ربیع الثانی 1443ھ 29 نومبر 2021 ء

دارالافتاء

 

جی پی فنڈ کا حکم


سوال

میں ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ میں ملازم ہوں، میری تنخواہ میں سے کچھ پیسے سرکاری طور پر GP فنڈ کی مد میں کاٹے جاتے ہیں، اور یہ پیسے جبری کاٹے جاتے ہیں، ہر سال حکومت کی طرف سے ان جمع شدہ پیسوں پر اضافہ بھی ہوتا ہے۔ براہِ کرم اس اضافے کی شرعی حیثیت واضح کریں!

جواب

''جی پی'' فنڈ جس کی کٹوتی ملازمین کی مرضی سے نہ ہوتی ہو  بلکہ جبری طور پر ہو، اس کی اصل رقم بمع اضافی رقم کے لینا جائز ہے اور اس کی وجہ سے ملازم کی تنخواہ پر اثرنہیں  پڑتا۔ البتہ جہاں کٹوتی اختیاری ہو،وہاں  اضافی رقم کا لینا جائز نہیں ہے۔

مزید تفصیل کے لیے درج ذیل فتوی ملاحظہ ہو :

جی پی فنڈ (GP Fund) کی مد میں ملنے والی اضافی رقم کا حکم

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144201200084

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں