بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 محرم 1446ھ 15 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

فوم والی جائے نماز پر نماز کا حکم


سوال

نرم فوم والی جا ئے نماز پر نماز پڑھنے کا کیا حکم ہے ؟

جواب

واضح رہے کہ  نرم فوم والی جائے نماز  اگر ایسی  ہو کہ اس پر نماز پڑھتے ہوئےسجدہ کرنے کی صورت میں  پیشانی  زمین پر ٹک جائےاور زمین کی سختی محسوس ہو خواہ تھوڑا دباؤ کے ذریعہ ہی کیوں نہ ہو تو ایسی فوم والی جائے نماز  پر نماز پڑھنا جائز ہے ،البتہ اگر فوم اتنا موٹا ہو کہ سجدہ کرنے کی صورت میں دھنستا ہی چلا جائے اور ایک جگہ ٹکے نہیں تو اس صورت میں اس جائے نماز  پر نماز پڑھنا جائز نہیں۔

البحرالرائق میں ہے :

"والأصل كما أنه يجوز السجود على الأرض يجوز على ما هو بمعنى الأرض مما تجد جبهته حجمه وتستقر عليه وتفسير وجدان الحجم أن الساجد لو بالغ لا يتسفل رأسه أبلغ من ذلك فيصح السجود على الطنفسة والحصيرة والحنطة والشعير والسرير والعجلة إن كانت على الأرض؛ لأنه يجد حجم الأرض، بخلاف ما إذا كانت على ظهر الحيوان؛ ‌لأن ‌قرارها ‌حينئذ ‌على ‌الحيوان ‌كالبساط ‌المشدود ‌بين ‌الأشجار."

(کتاب الصلاۃ،آداب الصلاۃ،ج:1،ص:337،دارالکتاب الاسلامی)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144509101280

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں