بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

29 صفر 1444ھ 26 ستمبر 2022 ء

دارالافتاء

 

فلیورڈ کنڈوم پہن کر اورل سیکس کرنا


سوال

آج کل مارکیٹ میں لیٹکس میٹریل کے فلیورڈ کنڈوم دستیاب ہیں،ان کو پہن کر اورل سیکس کرنا کیسا ہے جب کہ عضو تناسل کی جلد کے منہ سے مس ہونے کا کوئی امکان نہ ہو۔

جواب

بصورتِ  مسئولہ اگرچہ عضوِ  تناسل کی جلد کا منہ سے مس ہونے کا امکان نہیں ہے ، تب بھی  یہ عمل  غیرشریفانہ اورغیرمہذب  ہے،میاں بیوی کاایک دوسرے کی شرمگاہ کودیکھنابھی غیرمناسب  اور حیا کے خلاف ہے؛ لہذااس سے  احتراز کرنا چاہیے۔ حدیث  شریف  میں ام المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہافرماتی ہیں:

"مانظرت أو مارأیت فرج رسول الله صلى اللہ علیه و سلم قط."

[سنن ابن ماجہ:138،ابواب النکاح،ط:قدیمی]

میں  نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سترکی طرف کبھی نظرنہیں اٹھائی،یایہ فرمایاکہ میں نے  آپ صلی اللہ علیہ وسلم کاسترکبھی نہیں دیکھا۔

اس حدیث کے ذیل صاحب مظاہرحق علامہ قطب الدین دہلویؒ لکھتے ہیں:

"ایک روایت میں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہاکے یہ الفاظ ہیں کہ :نہ توآں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے میراسترکبھی دیکھااورنہ کبھی میں نے آں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کاستردیکھا۔ان روایتوں سے معلوم ہواکہ اگرچہ شوہراوربیوی ایک دوسرے کاستردیکھ سکتے ہیں،  لیکن آدابِ  زندگی اورشرم وحیا  کاانتہائی درجہ یہی ہے کہ شوہراوربیوی بھی آپس میں ایک دوسرے کاسترنہ دیکھیں۔"

[مظاہرحق،3/262،ط:دارالاشاعت کراچی] 

فتاوی رحیمیہ میں ہے:

"غور  کیجیے! جس منہ سے پاک کلمہ پڑھا جاتا ہے ، قرآنِ مجید کی تلاوت کی جاتی ہے درودشریف پڑھا جاتاہے ا س کو ایسے خسیس کام میں استعمال کرنے کو دل کیسے گوارا کر سکتا ہے ؟ ایک شاعر کہتا ہے:
ہزار بار بشویم دہن زمشک وگلاب
ہنور نام تو گفتن کمال بے ادبی است
ہزار مرتبہ مشک و گلاب سے منہ دھوؤں تب بھی تیرا پاک نام لینا بے ادبی سا ہے ۔"

[فتاویٰ رحیمیہ،10/178،ط:دارالاشاعت کراچی]

"في النوازل: إذا أدخل الرجل ذکره في فم امرأته، قد قیل: یکرہ، و قد قیل بخلافه، کذا في الذخیرۃ."

(عالمگیری ج۶ ص ۲۴۶ کتاب الکراهية، الباب الثلاثون فی المتفرقات)

فقط والله اعلم


فتوی نمبر : 144109200989

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں