بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

15 ذو القعدة 1445ھ 24 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

فاسد تروایح کی قضا


سوال

 تراویح کی کچھ رکعتیں فاسد ہوگئیں ،کچھ دن بعد ان کی قضا رمضان ہی  میں جماعت کے ساتھ درست ہے یا نہیں ؟

جواب

اگر کسی وجہ  سے تراویح کی  نماز فاسد ہوجائے ،تو وقت گزرنے کے بعد فاسد  شدہ  رکعتوں کا  اعادہ واجب نہیں ہے، وقت گزرنےکے بعد تراویح کی قضا کی نیت سے اعادہ کرنا مکروہ ہے۔

فتاوی ہندیہ میں ہے:

"و إذا فاتت التراويح لاتقضي بجماعة و لا بغيرها و هو الصحيح ... و إذا تذكروا أنه فسد عليهم شفع من الليلة الماضية فأرادوا القضاء بنية التراويح يكره."

(كتاب الصلاة، الباب التاسع في النوافل، فصل في التراويح،1/ 129،ط: دارالکتب العلمیة)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144509101981

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں