بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 27 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

فارم ڈی کا لائسنس کسی کو بیچنا یا کرائے پر دینا


سوال

اپنا فارم ڈی کا لائسنس کسی کو بیچ سکتے ہیں یا کراے پر دے سکتے ہیں ؟

جواب

کسی بھی شعبے کا لائسنس جو کسی شخص یا کمپنی کو حکومت کی طرف سےجاری کیا جاتا ہے وہ خاص  اس شخص یا کمپنی کے لیے اس شعبہ کو اختیار کرنے کا   اجازت نامہ ہوتا ہے،  کسی اور کے لیے اس لائنسس کو استعمال کی قانوناً اجازت نہیں ہوتی اور حکومت کی ایسی جائز پابندیاں جو مفادِ عامہ کی مصلحت میں ہوں ان کی پاس داری شرعاً بھی لازم ہوتی ہے، نیز یہ اجازت نامہ  کوئی ایسا مال نہیں ہے جس کو  کرایہ پر دیا جاسکے یا فروخت کیا جاسکے، اس لیے اس کو کرایہ پر دینا اور لینا اور اس کی آمدنی دونوں ناجائز ہیں۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144108200623

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے