بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 محرم 1446ھ 15 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

اذان فجر میں الصلاۃ خیر النوم کے جواب میں کیا کہنا چاہیے؟


سوال

صبح کی اذان سنتے وقت"الصلاة خير من النوم"کے جواب میں کیا الفاظ کہنے چاہیے؟

جواب

صبح کی اذان میں جب موذن "الصلاة خير من النوم"  کہے تو سننے والے کو "صَدَقْتَ ‌وَبَرَرْتَ" کہنا چاہیے۔

بدائع الصنائع میں ہے:

"وأما بيان ما يجب على السامعين عند الأذان فالواجب عليهم الإجابة... وكذا إذا قال المؤذن: " الصلاة خير من النوم " لا يعيده السامع لما قلنا ولكنه يقول: ‌صدقت ‌وبررت، أو ما يؤجر عليه".

(كتاب الصلاة، فصل:وأما بيان ما يجب على السامعين،1/ 155، ط: سعيد)

عمدۃ القاری میں ہے:

"وقال النووي: تستحب إجابة المؤذن بالقول، مثل قوله لكل من سمعه من متطهر ومحدث وجنب وحائض وغيرهم... وإذا ثوب المؤذن في صلاة الصبح فقال: الصلاة خير من النوم، قال سامعه: صدقت وبررت. انتهى".

(كتاب الأذان، باب ما يقول إذا سمع المنادي، 5/ 117، ط: دار الفكر)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144510102005

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں