بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 شوال 1441ھ- 28 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

عورت کا چاليس سال کی عمر کے بعد با لوں کو کالا رنگ کرواناکیسا ہے؟


سوال

عورت کا 40سال کی عمر کے بعد با لوں کو کالا رنگ کرواناکیسا ہے؟

جواب

خالص سیاہ خضاب یا سیاہ رنگ لگا کر بالوں کو کالا کرنے کی ممانعت چوں کہ احادیثِ صحیحہ میں وارد ہوئی ہے، اس وجہ سے بالوں کو کالا کرنا جائز نہیں،  البتہ میدانِ جنگ میں دشمن پر رعب قائم رکھنے کی خاطر مردوں کے لیے سیاہ خضاب استعمال کرنے کی اجازت ہے۔

"عن جابر قال: أتي النبي صلی الله عليه وسلم بأبي قحافة یوم فتح مکة ورأسه ولحیته کالثغامة بیاضاً، فقال النبي صلى الله عليه وسلم: غیروا هذا بشيء،

واجتنبوا السواد". (الصحيح لمسلم، کتاب اللباس والزینة، باب استحباب خضاب الشیب بصفرة أو حمرة وتحریمه بالسواد، النسخة الهندیة ۲/ ۱۹۹، بیت الأفکار رقم: ۲۱۰۲)

ترجمہ: حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ  فتحِ مکہ کے دن حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے والد "ابوقحافہ"  رضی اللہ عنہ نبی کریم ﷺ کی خدمت میں لائے گئے، ان کے سر اور داڑھی کا بال بالکل سفید ہوچکے تھے، نبی ﷺ نے فرمایا: اس (سفید رنگ) کو کسی خضاب سے بدل (کر رنگ) دو، لیکن کالے رنگ سے اجتناب کیجیو!

"والأمر للوجوب، وترك الواجب یوجب الوعید. وروی أبو داؤد، والنسائي عن ابن عباس عن النبي صلى الله عليه وسلم قال:« یکون قوم في آخر الزمان یخضبون بهذا السواد کحواصل الحمام لایریحون رائحة الجنة»". (سنن النسائي، کتاب الزینة من السنن، النهي عن الخضاب بالسواد، النسخة الهندیة ۲/ ۲۳۶، دارالسلام رقم: ۵۰۷۸)

ترجمہ: مذکورہ حدیث (صحیح مسلم کی روایت میں) رسول اللہ ﷺ کا حکم وجوب کے لیے ہے، اور واجب کو چھوڑنا وعید کا سبب ہوتاہے؛ اسی وجہ سے رسول اللہ ﷺ نے اس (بال سیاہ کرنے) پر وعید بھی بیان فرمائی ہے، چناں چہ ابوداؤد اور نسائی رحمہما اللہ نے حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت کیا ہے کہ نبی کریم ﷺ نے فرمایا: آخری زمانے میں کچھ لوگ ایسے ہوں گے جو سیاہ خضاب استعمال کریں گے جیسے کبوتر کے پوٹے، وہ (لوگ) جنت کی خوش بو بھی نہیں سونگھ سکیں گے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144108200130

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے