بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 رجب 1444ھ 28 جنوری 2023 ء

دارالافتاء

 

دودھ پیتے بچے کے پشاب کا حکم


سوال

اگر دودھ پیتا بچہ/بچی کپڑوں پر پیشاب کر دے تو کیا ان کپڑوں سے نماز پڑھی جا سکتی ہے؟

جواب

شیرخوار (دودھ پیتے) بچے/بچی کا پیشاب  بھی اسی طرح ناپاک ہوتا ہے جس طرح بڑے آدمیوں کا پیشاب ناپاک ہے، ایک درہم کی مقدار سے زائد  کپڑوں  پر لگ جانے کی صورت میں  ان کپڑوں  کے ساتھ  نماز پڑھنا جائز نہیں ہے، دھو کر پاک کرنا ضروری ہے۔ البتہ اس کے پاک کرنے کے طریقہ میں قدرے تخفیف ہے، وہ یہ ہے کہ اس کو پاک کرنے  کے لیے ناپاکی والے حصہ پر  اچھی طرح پانی بہا (ہنڈیل) دینا کافی ہے، زیادہ مبالغہ کی ضرورت نہیں ہے۔

حدیث شریف میں ہے:

"حدثنا جرير، عن هشام، عن أبيه، عن عائشة، قالت: «أتي رسول الله صلى الله عليه وسلم بصبي يرضع فبال في حجره فدعا بماء فصبه عليه»."

(صحیح مسلم،  باب حكم بول الطفل الرضيع وكيفية غسله، ج: 1، صفحه: 237، رقم الحدیث: 102، ط: دار إحياء التراث العربي - بيروت)

فتاوی شامی میں ہے:

وبول غیرمأ کول ولو من صغیر لم یطعم  (قوله: لم يطعم) بفتح الياء أي: لم يأكل فلا بد من غسله.

(کتاب الطهارۃ، باب الأنجاس، ج: 1، صفحه: 318، ط: ایچ، ایم، سعید)

فتاوی عالمگیری میں ہے:

"وكذلك بول الصغير والصغيرة أكلا أو لا، كذا في الاختيار شرح المختار."

(کتاب الطهارۃ،  الباب السابع في النجاسة وأحكامها، الفصل الثاني في الأعيان النجسة، ج: 1، صفحه: 46، ط: دار الفکر)

البناية شرح الهداية میں ہے:

"الثاني: بول الصبي الذي لم يطعم فكذلك عند جميع أهل العلم قاطبة ... وعند الشافعي نجاسة خفيفة ... واحتجوا في ذلك بأحاديث منها: ما رواه البخاري ومسلم واللفظ له عن عائشة - رَضِيَ اللَّهُ عَنْهَا - قالت: «كان رسول الله صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يؤتى بالصبيان فيبرك عليهم ويحنكهم، فأتي بصبي فبال عليه فدعى بماء فأتبعه بوله ولم يغسله». قلنا: لم يغسله محمول على نفي المبالغة فيه، وما ورد في الأحاديث من النضح المراد به الصب."

(کتاب الطهارۃ، ما يعفى عنه من النجاسات، ج: 1، صفحہ: 723، ط:  دار الكتب العلمية - بيروت، لبنان)

فقط واللہ  اعلم


فتوی نمبر : 144204200382

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں