بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ذو الحجة 1445ھ 23 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

دو لاکھ مہر میں ملے ہوں تو زکاۃ کا حکم


سوال

اگر کسی کا مہر دو لاکھ روپے ہو،  ڈیڑھ لاکھ کا زیور ہو اور پچاس ہزار کسی کے پاس امانت رکھے ہوں تو زکاۃ کا بقیہ حکم رہے گا؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں زیور کی موجودہ قیمت اور پچاس ہزار روپے  پر زکاۃ کا سال مکمل ہونے کے بعد زکاۃ کی ادائیگی لازم ہے۔ نیز اس کے علاوہ سونا، چاندی، نقد یا سامانِ تجارت ہو تو اس کا حساب بھی اس کے ساتھ کیا جائے گا۔

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (2 / 259):

"(وسببه) أي سبب افتراضها (ملك نصاب حولي) نسبة للحول لحولانه عليه."

فقط والله اعلم


فتوی نمبر : 144205200649

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں