بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

3 ذو الحجة 1443ھ 03 جولائی 2022 ء

دارالافتاء

 

دیدارِ الٰہی کے بارے میں اہلِ سنت کا موقف


سوال

دیدارِالہٰی کے متعلق اہل سنت کاموقف کیاہے؟

جواب

اہلِ  سنت والجماعت کاعقیدہ ہے کہ قیامت کےدن اہلِ جنت کوان کےظاہری آنکھوں سے اللہ تعالی کادیدارکرایاجائےگا،اورتمام اہلِ جنت دیدارِالٰہی سےایسےلطف اندوزہوں گےکہ اس سے بڑھ کرکوئی اورچیزان کےلیےاس قدرباعثِ مسرت نہیں ہو گی۔

شرح العقیدۃ الطحاویہ میں ہے:

"قال رحمه الله تعالى: (والرؤية حقٌّ لأهل الجنة بغير إحاطة ولا كيفية، كما نطق به كتاب ربِّنا: (وُجُوهٌ يَوْمَئِذٍ نَاضِرَةٌ  إِلَى رَبِّهَا نَاظِرَةٌ) ... و مسألة الرؤية، مسألة عظيمة افترقت فيها الأمة، فأهل السنة والجماعة يؤمنون بأن المؤمنين يرون ربهم يوم القيامة عيانا بأبصارهم، يرونه في عرصات القيامة ـ يعني: في مواقف القيامة ـ ، ويرونه في الجنة، كما يشاء سبحانه وتعالى، يرونه ويسعدون، وينعمون بالنظر إلى ربهم."

(إثبات رؤیة المؤمنین لربهم في الآخرۃ، ص: 112، ط: دار التدمیریة)

الفقہ الاکبرمیں ہے:

"و كان الله تعالى خالقًا قبل أن يخلق و رازقًا قبل أن يرزق و الله تعالى يرى في الآخرة و يراه المؤمنون و هم في الجنة بأعين رؤوسهم بلا تشبيه و لا كيفية و لايكون بينه و بين خلقه مسافة."

(رؤیۃ اللہ فی الآخرۃ،ص:53،ط:دارالفرقان)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144308102085

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں