بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

11 صفر 1443ھ 19 ستمبر 2021 ء

دارالافتاء

 

دانیال حسن یا تانیال نام رکھنا


سوال

دانیال حسن نام کیسا رہے گا؟ کیا تانیال نام رکھا جا سکتا  ہے؟

جواب

"دانیال": دانيال ایک پیغبر علیہ السلام کا نام ہے، اور "حسن "  رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نواسے کا نام ہے۔ دونوں مبارک نام ہیں، ان دونوں کو ملاکر بچہ کا نام رکھنا درست ہے۔

"تانیال" نام  رکھنا مناسب نہیں ہے، کیوں کہ نہ تو اس کا معنی کسی مستند لغت میں مل سکا ہے، اور نہ ہی کسی نبی علیہ السلام، صحابی رضی اللہ عنہ یا کسی بزرگ شخصت کا نام ہے۔

"(كان نبي من الأنبياء) قيل: هو إدريس أو دانيال عليهما السلام."

(بذل المجهود: باب في تشميت العاطس في الصلاة (4/ 429)،ط. مركز الشيخ أبي الحسن الندوي للبحوث والدراسات الإسلامية، الهند، الطبعة: الأولى، 1427 هـ - 2006 م)

"عن أبى وهب الجشمى رضى الله عنه وكانت له صحبة قال قال رسول الله -صلى الله عليه وسلم- :« سموا بأسماء الأنبياء وأحب الأسماء إلى الله عبد الله وعبد الرحمن وأصدقها حارث وهمام وأقبحها حرب ومرة »."

(أخرجه البيهقي في الكبرى في  باب ما يستحب أن يسمى به (9/ 514) برقم (19307) ،ط.مجلس دائرة المعارف النظامية الكائنة في الهند ببلدة حيدر آباد،الطبعة : الأولى ـ 1344 هـ)

عمدة القاري  میں ہے:

"وقد تقرر الإجماع على إباحة التسمية بأسماء الأنبياء عليهم الصلاة والسلام وتسمى جماعة من الصحابة بأسماء الأنبياء."

(باب قول الله تعالى: {فإن لله خمسه وللرسول} (15/ 39)،ط.دار إحياء التراث العربي - بيروت)

فقط، واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144202201357

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں