بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 ربیع الاول 1442ھ- 30 اکتوبر 2020 ء

دارالافتاء

 

بھانجے یا بھتیجے کی مطلقہ / بیوہ سے نکاح کا حکم


سوال

جس طرح چچی،تائی  اورممانی سے نکاح کرنا فراق کے بعد جائز اورحلال ہوجاتا ہے، کیاان  کےبرعکس یعنی بھتیجے کی زوجہ،اور بھانجے کی زوجہ سےنکاح جائز ہےیانہیں؟

جواب

بھتیجے کی بیوی یا بھانجے کی بیوی  شرعًا  محرم نہیں ہوتی ہے، اس لیے چچا کے لیے بھتیجے کی مطلقہ/بیوہ سے نیز  ماموں کے لیے بھانجے کی مطلقہ/بیوہ سے  نکاح کرنا جائز ہے، بشرطیکہ محرمیت کا کوئی اور رشتہ (مثلاً رضاعت کا رشتہ) نہ ہو۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109201117

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں