بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 محرم 1446ھ 19 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

بینک اسلامی سے حاصل شدہ منافع استعمال کرنا


سوال

میرا اکاؤنٹ بینک اسلامی میں ہے،  مجھے ہر ماہ کچھ رقم منافع کے طور پر حاصل ہوتی ہے،  مجھے اس رقم کے بارے میں معلوم کرنا ہے کہ اس کو میں استعمال کرسکتا ہوں یا نہیں ؟ ویسے میں یہ رقم کسی غریب کو دے دیتا ہوں!

جواب

مروجہ اسلامی بینکوں کے تمام معاملات  شریعت کے مطابق نہیں، جس کی وجہ سے وہاں سے حاصل شدہ منافع حلال نہیں ہے، لہٰذا ان بینکوں میں بھی منافع بخش اکاؤنٹ کھولنا جائز نہیں ہے، اور اس سے ملنے والا نفع وصول کرنا اور اس کو  استعمال کرنا جائز نہیں ہے،اگر لاعلمی میں وصول کرلیا تو  کسی غریب کو ثواب کی نیت کے بغیر دینا ہی اس کا مصرَف ہے۔ لہٰذا اولاً آپ سیونگ اکاؤنٹ بند کروادیجیے یا ضرورت ہے تو کرنٹ اکاؤنٹ میں تبدیل کروالیجیے، اور جب تک یہ اکاؤنٹ تبدیل نہ ہو اس میں سے نفع کی رقم وصول ہی نہ کیجیے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144210201239

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں