بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 جُمادى الأولى 1443ھ 09 دسمبر 2021 ء

دارالافتاء

 

بیٹی کا نام زیمل رکھنا


سوال

میں نے اپنی بیٹی کا نام  "زیمل"  رکھا ہے،  جو میری بیوی نے مجھے بتایا تھا کہ یہ حضور   ﷺ کی چادر مبارک کا نام ہے، اب مجھے پتہ چلا کہ اس کے معنی تو کچھ اور ہے، آپ حضرات مجھے نام کا صحیح مطلب یا کوئی اچھا نام بتا دیں!

جواب

 سیرت کی کتابوں میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی مبارک چادروں  میں   "زیمل"  نام کی چادر  کا ذکر ہمیں نہیں  ملا۔

عربی لغت میں لفظ ’’زیمل‘‘ کے بجائے لفظ ’’زمل‘‘ استعمال ہوتا ہے، ’’زِمل‘‘  زا کے زیر اور  میم کے سکون کے ساتھ،بوجھ، کم زور، سست، کم تر کے معنی میں ہے، اور ’’زُمَل‘‘  زاء کے پیش اور میم کے فتحہ(زبر) کے ساتھ بزدل، کم زور اور کمینہ کے معنیٰ میں ہے؛  اس لیے یہ نام رکھنا مناسب نہیں۔

البتہ ’’زَمَل‘‘ زاء اور لام دونوں کے فتحہ کے ساتھ تیزی کے معنیٰ میں ہے۔ اس مادے کا ایک معنیٰ کسی کے پیچھے چلنا، کسی کو اپنے پیچھے سواری پر بٹھانا، کسی کا ساتھی ہونا وغیرہ بھی ہے۔ اس اعتبار سے ’’زَمَل‘‘ نام رکھنا درست ہے، لیکن زیادہ بہتر یہ ہے کہ بچیوں کے نام ازواجِ مطہرات، بنات طیبات اور صحابیات رضی اللہ عنہن کے ناموں میں سے کسی کے نام پر بیٹی کا نام رکھا جائے۔

تاج العروس من جواهر القاموس میں ہے:

"و الزمل بالكسر: الحمل وفي حديث أبي الدرداء: إن فقدتموني لتفقدن زملًا عظيمًا يريد حملًا عظيمًا من العلم."

(ج: 1/ صفحہ: 7141)

لسان العرب میں ہے:

"و الزمل: الكسلان. والزمل والزمل والزميل والزميلة والزمال: بمعنى الضعيف الجبان الرذل؛ قال أحيحة:ولا وأبيك ما يغني غنائي، ... من الفتيان، زميل كسولوقالت أم تأبط شرا: وا ابناه وا ابن الليل، ليس بزميل، شروب للقيل، يضرب بالذيل، كمقرب الخيل. والزميلة: الضعيفة. قال سيبويه: غلب على الزمل الجمع بالواو والنون لأن مؤنثه مما تدخله الهاء. والزمل: الحمل. وفي حديث أبي الدرداء: لئن فقدتموني لتفقدن زملا عظيما؛ الزمل: الحمل، يريد حملا عظيما من العلم؛ قال الخطابي: ورواه بعضهم زمل، بالضم والتشديد، وهو خطأ. أبو زيد: الزملة الرفقة؛ وأنشد:

لم يمرها حالب يوما، و لا نتجت ... سقبا، ولا ساقها في زملة حاديالنضر: الزوملة مثل الرفقة. والإزميل: شفرة الحذاء؛ قال عبدة بن الطبيب:عيرانة ينتحي في الأرض منسمها، ... كما انتحى في أديم الصرف إزميلورجل إزميل: شديد الأكل، شبه بالشفرة، قال طرفة:تقد أجواز الفلاة، كما... قد بإزميل المعين حور

والحور: أديم أحمر، والإزميل: حديدة كالهلال تجعل في طرف رمح لصيد بقر الوحش، وقيل: الإزميل المطرقة. ورجل إزميل: شديد؛ قال:و لا بغس عنيد الفحش إزميل."

(ج: 11/ صفحہ: 311، ط:  دار صادر - بيروت)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144202201037

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں