بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

19 شوال 1443ھ 21 مئی 2022 ء

دارالافتاء

 

بچوں کو فاقہ میں چھوڑکر تبلیغ میں جانے کا حکم


سوال

میں ایک جمات کا امیر ہوں،  میرے پاس ایک آدمی آیا ہے،  اور کہنے  لگا، گھر میں اکیلا  کمانے والا ہوں، میری بیوی بیمار ہے،  اور صرف میرے تین  چھوٹے چھوٹے بچے  ہیں،  اور  میں نے جتنا  کمایا اتنا  لے کر آگیا،  پھر میں نے پوچھا کہ گھر کا خرچہ کہاں سے چلتا ہے؟   تو کہنے لگے:   ہمارے یہاں  جامن کے بہت باغ ہیں، بچے وہاں سے جامن توڑ کر لے آتے ہیں،  انہیں منڈی میں بیچ دیتے ہیں، اس سے گھر کا خرچہ چلتا ہے،  اور بیوی بچے کہتے ہیں: ہم فاقہ کاٹ لیں گے، آپ جماعت میں جائیں، تو اب آپ سے  سوال یہ ہے کہ اس شخص کا جماعت میں جانا جائز ہے یا نہیں؟ 

جواب

بصورتِ مسئولہ مذکورہ شخص کی جب بیوی بیمار ہے، اور بچے چھوٹے ہیں تو بیوی بچوں کے نفقے کا انتظام کرنا اور ان کا خیال رکھنا  اس شخص پر لازم اور ضروری ہے،ایسی صورت  میں بجائے کسی جماعت میں  جانے کے اپنے ہی علاقہ میں دعوت وتبلیغ کا کام کرتا رہے، اور اس کے  ساتھ  ساتھ اپنے بیوی بچوں کی کفالت بھی کرتا ہے، یوں دعوت کا کام بھی ہوتا رہےگا اور گھر میں فاقہ کی نوبت بھی نہیں ہوگی۔ 

جامعہ کے سابقہ فتاویٰ میں ہے:

’’سوال:

میرا تعلق تبلیغی جماعت سے ہے، چوں کہ میرے گھروالوں میں سے کسی نے بھی تبلیغ میں وقت نہیں لگایا ہے، اس  لیے وہ کہتے ہیں کہ گھر کی دیکھ بھال اور بال بچوں کا پیٹ بھرو، یہ بھی عبادت ہے، گھر میں چھ افراد کھانے والے ہیں، اور آپ صرف کمانے والے ہیں، اگر آپ تبلیغ میں جائیں گے تو گھر کے افراد کی دیکھ بھال کون کرے گا؟ کیا ان کا یہ کہنا صحیح ہے؟

جواب:

تبلیغ میں جانا نہایت ضروری ہے، کیوں کہ اس سے آدمی کی اِصلاح ہوتی ہے، لیکن شریعت نے بال بچوں کی بھی ذمہ داری رکھی ہے، ان کے اخراجات کا بندوبست کرکے پھر جائیں، اگر تبلیغ میں جانے سے ان کے اخراجات کا بندوبست نہیں ہوتا تو فی الحال گھر سے باہر نہ جائیں اور درس میں شامل ہوتے رہیں۔ فقط واللہ اعلم

الجواب صحیح                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    کتبہ

محمد عبدالسلام چاٹ گامی                                                                                                                                      محمد شاہد امین (22/01/1414)‘‘

دوسرے فتوے میں ہے:

’’یہ شخص اگر ضروریاتِ دین کا علم حاصل کرچکا ہے اور مزید چار ماہ سے کم تبلیغ میں جانا چاہتا ہے تو بیوی سے اخلاقًا اجازت لے لے، اور اگر چار ماہ سے زائد کا ارادہ ہے تو بیوی سے اجازت لینا ضروری ہے، اور دونوں صورتوں میں ایامِ تبلیغ کے نان و نفقہ وغیرہ کا انتظام کرنا بھی ضروری ہے۔ فقط واللہ اعلم

الجواب صحیح                                                                                                                                                                      کتبہ

محمد عبد السلام چاٹ گامی                                                                    ابوبکر سعید الرحمٰن (17/06/1413)‘‘

امداد المسائل (مفتی عبدالشکور ترمذیؒ) میں ہے:

"حضرت مولانا محمد الیاس صاحب رحمہ اللہ کی تبلیغی تحریک میں تعلیم وتعلم اوراصلاح وصلاح کے دونوں پہلوؤں کی رعایت ہے ،اگر حدودِ شرعیہ اورشرائط و آداب کو ملحوظ رکھ کر اس میں حصہ لیا جائے تو منجملہ دوسرے طرق تبلیغ کے یہ طریقہ بھی مفید اورمستحسن ہے اور اس کے ثمرات و فوائد  ظاہر وباہر ہیں، لیکن تعلیم وتعلم یااصلاحِ اخلاق کے  لیے ہر مسلمان پر گھر  سے باہر نکلنا اورسفر کرنا فرض نہیں ہے، بس اس قدر ضروری اورفرض ہے کہ دینی ضروری علم حاصل کرے اور اپنے اخلاق کی درستگی کی کوشش میں لگارہے ،اس کا جوطریقہ بھی میسر ہو اس پر عمل کرنے سے یہ فرض ادا ہوجائے گا ،فرائض کا علم حاصل کرنا فرض ہے اورواجبات کا واجب اورسنن ومستحبات کا سنت ومستحب ہوگا، البتہ جس شخص کے  لیے دوسرا طریقہ اپنی اپنی دینی ضروریات  کے سیکھنے کا میسر نہ ہوسکے ،اس کے  لیے اسی طریقہ کو فرائض وواجبات کی حدتک سیکھنے کے  لیے ضروری قرار دیا جائے گا اورباقی کے  لیے مستحب وسنت،  اورہر مسلمان پر بقدر اس کے علم کے لازم ہے کہ وہ اپنے توابع اورمتعلقین ِاہل وعیال کو تبلیغ ِدین کرتا رہے اوراحکام ِشریعت بتلاتا اوراس پر عمل کی تاکید کرتا رہے اورہر وقت ’’كلكم راع وكلكم مسئول عن رعیته ‘‘کو پیش ِ نظر رکھ کر اپنی مسئولیت کا خیال رکھے اپنے گردوپیش اوراپنے ماحول میں بقدر استطاعت احکام دین کی تبلیغ اوراصلاح اخلاق کی سعی اورکوشش میں لگارہے ،اس مذکورہ خاص شکل کے علاوہ تبلیغ کی یہ خاص صورت نہ فرضِ  عین ہے ،اورنہ ہی فرضِ  کفایہ، البتہ قواعد ِشرعیہ کو ملحوظ رکھتے ہوئے یہ ایک مستحب اور مستحسن عمل ہے ،جو شخص فکرِ معاش سے فارغ ہوکر اورحقوقِ اہل وعیال کا انتظام کرکے اس پر عمل کرنا چاہے وہ ایک مستحب اورمستحسن عمل کرتا ہے ،جو نہیں کرتا اس پر شرعاً کوئی مؤاخذہ نہیں ہے، بشرطیکہ دوسرے طریقہ سے وہ اس فرض کی ادائیگی میں ساعی اورکوشاںرہتا ہے۔"

(تبلیغی جماعت سے متعلق سوالات وجوابات، ص:108،  ط:حقانیہ ساہیوال)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144207201184

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں