بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 رجب 1444ھ 27 جنوری 2023 ء

دارالافتاء

 

عورتوں کا نامحرم مردوں کی چیزیں تو لیہ صابن وغیرہ استعمال کرنے کا حکم


سوال

عورتوں کا نا محرم مردوں کی چیزوں یعنی تولیہ، صابن یا کنگھی وغیرہ کا استعمال کرنا کیسا ہے؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں عورت  کے لیےنامحرم مردوں کی  چیزوں یعنی تولیہ، صابن ، کنگھی، پانی  کاجھوٹاوغیرہ کا محبت و شوق کے بغیر ضرورتاً استعمال کرناجائز ہے، البتہ نامحرم مردوں  کی طرف قلبی میلان اور تلذذ کے تصور کے ساتھ مذکورہ  چیزوں کااستعمال کرنا مکروہ ہے۔

فتاوی شامی میں ہے:

" (فسؤر آدمي مطلقا) ولو جنبا أو كافرا أو امرأة، نعم يكره سؤرها للرجل كعكسه للاستلذاذ واستعمال ريق الغير، وهو لا يجوز مجتبى."

(باب المياه،فصل في البئر،1 /221،ط:سعيد)

 فتاوی ہندیہ میں ہے:

" و کراهة سؤر المرأۃ للأجنبي کسؤرہ لها لیس لعدم طھارته، بل للإستلذاذ کذا في النهر الفائق ....."

(كتاب الطهارة ،الباب الثالث في المياه وفيه فصلان،۱/ ۲۳،ط:رشيدية)

فقط والله اعلم


فتوی نمبر : 144403101946

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں