بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 جُمادى الأولى 1444ھ 07 دسمبر 2022 ء

دارالافتاء

 

عقیقہ نہ کیا ہو تو قربانی کرنا کیسا ہے؟


سوال

ایسا شخص جس کا عقیقہ نہ ہوا ہو، اس کے نام سے قربانی  کرنا کیسا ہے؟

جواب

عقیقہ کرنا مستحب ہے،  اور اس  کا مسنون وقت یہ ہے کہ پیدائش کے ساتویں دن عقیقہ کرے،  اگر ساتویں دن عقیقہ نہ کرسکے تو چودھویں (14)  دن  ورنہ اکیسویں ( ۲۱) دن کرے۔لیکن اگر  کوئی شخص عقیقہ نہ کرے تو  اس  سے نہ وہ گناہ گار ہوگا اور نہ ہی اس سے دیگر احکام میں کوئی فرق آئے گا، لہذا جس کا عقیقہ نہ ہوا ہواس شخص کا خود قربانی کرنا یا کسی اور آدمی کا اس کی جانب سے قربانی کرنا دونوں درست ہے،اور  اس کی قربانی ادا ہوجائے گی۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144212201088

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں