بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

29 ربیع الثانی 1443ھ 05 دسمبر 2021 ء

دارالافتاء

 

’’انیب‘‘ نام کا مطلب اور رکھنے کا حکم


سوال

میرا نام” انیب“  ہے اور ایسا نام میں نے بہت کم سنا ہے،   اس نام کا  معنی اگر بتا دیں تو مہربانی ہو گی!

جواب

 عربی زبان میں "انیب" بر وزن فعیل مستعمل نہیں ہے، اس سے ملتا جلتا نام  "مُنِیب" ہے،  بمعنی لوٹنے والا، رجوع کرنے والا، یعنی اللہ کی طرف رجوع کرنے والا؛  لہذا ”انیب “ کے  بجائے ”مُنیب “ نام رکھ لیا جائے۔

تاج العروس (4/ 315):

"(ونابَ) زيدٌ (إِلى اللَّهِ) تَعالى: أَقبَلَ، و (تابَ) ، ورجَعَ إِلى الطّاعَة، ( {كأَنَابَ) إِليهِ} إِنابَةً، فَهُوَ  مُنِيبٌ."

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144210201079

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں