بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو الحجة 1445ھ 21 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

اعتکاف کی صحت کے لیے بالغ ہونا شرط نہیں ہے


سوال

کیا اعتکاف کے لیے بالغ ہونا شرط ہے؟

جواب

اعتکاف کے لیے بالغ ہونا شرط نہیں ہے ،  بچہ   اگر سمجھدار ہے،نماز کو سمجھتا ہے ،مسجد کے تقدس کا خیال رکھتا ہے تو اس کا اعتکاف میں بیٹھنا درست ہے۔

الفتاوى الهندية (1/ 211):

"وأما البلوغ فليس بشرط لصحة الاعتكاف فيصح من الصبي العاقل."

بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (2/ 108):

"وأما البلوغ فليس بشرط لصحة الاعتكاف فيصح من الصبي العاقل؛ لأنه من أهل العبادة، كما يصح منه صوم التطوع."

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144209201446

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں