بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 ذو الحجة 1441ھ- 03 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

اکاونٹ بنانا اور اس میں بیلنس رکھنا کیسا ہے؟


سوال

اکاؤنٹ بنانا اور اس میں بیلنس رکھنا کیسا ہے?

جواب

اکاؤنٹ کی دو  قسمیں ہیں:

سیونگ اکاؤنٹ:

 بینک میں سیونگ اکاؤنٹ کھلوانا اور اس میں بیلینس رکھنا  جائز نہیں ہے؛ کیوں کہ سیونگ اکاؤنٹ میں رقم رکھوانے پر بینک کی طرف سے جو منافع ملتا ہے وہ سود ہونے کی وجہ سے ناجائز اور حرام ہے۔

کرنٹ اکاؤنٹ:

  اگراکاؤنٹ کھلوانے کی واقعی ضرورت ہو توکسی بھی بینک میں کرنٹ اکاؤنٹ کھلوانے کی گنجائش ہے، اگرچہ اس اکاؤنٹ میں جمع شدہ رقم بھی بینک اپنےسودی معاملات میں استعمال کرتاہے، لیکن اکاؤنٹ ہولڈر کو سود میں شامل نہیں کیا جاتا؛ اس لیے ضرورت کے وقت کرنٹ اکاؤنٹ کھلوانے کی اجازت ہے۔

ایک  صورت یہ ہےکہ بینک کا لاکرخریدکر اپنی رقم وغیرہ  اس لاکر میں محفوظ کرلی جائے،  یہ صورت سب سے بہتر ہے کہ اس صورت میں بینک آپ کی رقم استعمال نہیں کرے گا۔

اگر آپ کا سوال اس کے علاوہ کسی صورت کے بارے میں ہے تو وضاحت کے ساتھ دوبارہ سوال ارسال کردیجیے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109200213

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں