بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1442ھ 24 جون 2021 ء

دارالافتاء

 

آپﷺ کی تاریخ پیدائش اوروفات کا راجح قول


سوال

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی تاریخِ پیدائش اور تاریخِ وفات کیا ہے ؟ راجح قول کیا ہے؟

جواب

سردارِ دوجہاں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی پیدائش واقعۂ فیل کےپچاس یا پچپن روزکے بعد بتاریخ ۸ ربیع الاول بروز پیر مطابق ماہِ اپریل 570ء مکہ مکرمہ میں صبح صادق کے وقت ابوطالب کے مکان میں ہوئی۔ ولادت باسعادت کی تاریخ میں مشہوریہ ہے کہ حضورصلی اللہ علیہ وسلم 12 ربیع الاول کو پیدا ہوئے، لیکن جمہور محدثین اور مورخین کے نزدیک راجح اور مختار قول یہ ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم 8 ربیع الاول کوپیداہوئے۔

 (سیرت المصطفیٰ 149،ج،5،ط :مکتبہ عثمانیہ لاہور، ناقلاعن زرقانی شرح مواہب اللدنیہ)

حضور صلی اللہ علیہ وسلم بروز دوشنبہ دوپہر کے وقت 12 ربیع الاول کو دنیاسے پردہ فرماگئے ۔

(سیرۃ المصطفیٰ :2263،ط : مکتبہ عثمانیہ لاہور)

حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ بہشتی زیور میں لکھتے ہیں:

’’پھر بدھ کے روزصفرکے مہینے کے دودن رہے تھے آپ صلی اللہ علیہ وسلم بیمارہوئےاورربیع الاول کی بارہ تاریخ پیرکے روزچاشت کے وقت تریسٹھ 63کی عمرمیں وفات پاگئے۔‘‘

(بہشتی زیور آٹھواں حصہ 381،ط :العریب بپلشرز)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143101200014

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں