بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

25 جمادى الاخرى 1441ھ- 20 فروری 2020 ء

دارالافتاء

 

11 تولہ سونا اور 9 لاکھ قرضہ کی صورت میں زکاۃ کے وجوب کاحکم


سوال

میں ایک مطلقہ عورت ہوں، میرے پاس 11 تولہ کے قریب سونا ہے، اور تقریباً  9لاکھ روپے کی مقروض بھی ہوں اور قسط وار قرضہ ادا کر رہی ہوں،کیا مجھ پر  زکاۃ واجب ہے؟

جواب

اگر اس سونے کے علاوہ اور کوئی مالِ نامی (نقدی، مالِ تجارت، چاندی یا سونا) نہیں ہے تو  چوں کہ قرضہ سونے کی مالیت سے زیادہ ہے؛ اس لیے فی الوقت زکاۃ لازم نہیں ہے۔  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008201552

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے