بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 13 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

کیا آپ ﷺ سے خود اذان دینا ثابت ہے؟


سوال

کیا حضور علیہ السلام نے خود اذان دی ہے؟

جواب

واضح رہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے نفسِ اذان تو قطعی طور پر ثابت ہے ، اس میں کسی کا کوئی اختلاف نہیں؛  اس لیے کہ ’’ سنن ابی داود ‘‘ اور ’’ جامع ترمذی ‘‘ میں روایت ہے کہ حضرت حسن رضی اللہ عنہ کی ولادت کے وقت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے کان میں اذان دی تھی ۔ ’’ سنن ابی داود ‘‘ میں ہے:

            ’’ عن عبید اللّٰه بن أبي رافع عن أبیه قال : رأیت رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم أذّن في اُذن الحسن بن علي حین ولدته فاطمة بالصلاة ‘‘. (2/696، میر محمد)             وھکذا في جامع الترمذي  ۔ (1/278، قدیمی)

            باقی آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز کے لیے اذان دینا ثابت ہے یا نہیں؟  اس بارے میں شروع ہی سے ائمۂ محدثین میں اختلاف چلا آرہا ہے ، ائمۂ محدثین کی اس بارے میں دو رائے ہیں :

            ۱۔ امام محی الدین النووی اور علامہ جلال الدین السیوطی رحمہما اللہ وغیرہما کا موقف ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنی حیات طیبہ میں دورانِ سفر نماز کے لیے ایک مرتبہ اذان دینا ثابت ہے ، ان حضرات کا استدلال وماخذ ’’ جامع الترمذی ‘‘ میں حضرت یعلی بن مرۃ الثقفی کی روایت ہے ۔ حدیث شریف میں ہے :

’’ عن عمرو بن عثمان بن یعلی بن مرة عن أبیه عن جدّه أنّهم کانوا مع النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم في سفر فانتهوا إلی مضیق، فحضرت الصلاة، فمطروا السماء من فوقهم والبلة من أسفل منهم، فأذن رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم وهو علی راحلته، وأقام، فتقدم علی راحلته، فصلی بهم، یؤمی إیماءً، یجعل السجود أخفض من الرکوع‘‘.  (1/94 قدیمی)

            اس حدیث شریف میں ’’فأذّن رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم ‘‘ الخ کے الفاظ سے معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بنفسِ نفیس نما زکے لیے اذان دی ، پھر صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کو نماز پڑھائی ۔

            اور امام نووی رحمہ اللہ نے اس حدیث کو جید الاسناد اور قابلِ اعتماد قرار دیتے ہوئے اپنی کتب ’’شرح المہذب ‘‘ ، ’’’ الخلاصۃ ‘‘ ، ’’ روضۃ ‘‘ ، اور اسی طرح دیگر تصانیف میں اس بات کو پر زور طریقہ سے ثابت فرمایا ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز کے لیے اذان دینا ثابت ہے ۔ 

            اور ان حضرات کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ بات ناممکن ہے کہ جناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہ اجمعین کو ایک کام کرنے کا حکم دیا ہو اور اس کے بکثرت فضائل بیان فرمائے ہوں اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ اقدس نے اس پر عمل کرکے نہ دکھایا ہو ۔

            ۲۔ علامہ ابن حجر العسقلانی ، علامہ زرقانی ، امام دار قطنی ، اور اسی طرح علامہ سہیل رحمۃ اللہ علیہم یہ حضرات ’’ترک مباشرة الأذان‘‘ ( یعنی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز کے لیے اذان کے ثابت نہ ہونے ) کے قائل ہیں ، ان حضرات کا کہنا یہ ہے کہ ’’ترک مباشرة الأذان‘‘  کا مسئلہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے خصائص میں سے ہے، لہٰذا اب یہ اشکال کہ یہ بات نا ممکن ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک کام کرنے کا حکم فرمایا ہو اور خود ایک مرتبہ بھی اس پر عمل کرکے نہ دکھایا ہو، باقی نہیں رہتا ۔

            باقی ’’ جامع الترمذی ‘‘ کی مذکورہ روایت کے الفاظ ’’فأذّن رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم‘‘ الخ کے بارے میں علامہ ابن حجر عسقلانی رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ’’ فتح الباری شرح صحیح البخاری ‘‘ میں تحریر فرمایا ہے کہ جس سند سے امام ترمذی رحمۃ اللہ علیہ نے اس حدیث کو نقل کیا ہے ، اسی سند سے یہ حدیث ’’ مسند احمد ‘‘ میں بھی موجود ہے ، جس میں فأذّن … ‘‘ الخ کے بجائے ’’ فأمر المؤذن … ‘‘الخ ( یعنی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مؤذن کو اذان دینے کا حکم فرمایا ) کے الفاظ ہیں ، اس سے معلوم ہوا کہ ’’ جامع الترمذی‘‘ کی روایت میں اختصار اور اجمال ہے ، اور ’’ مسند احمد ‘‘ کی روایت میں اس کی تفصیل ہے ، اور حدیث کے اصول میں سے ہے کہ مفصل روایت کو مجمل پر ترجیح ہوتی ہے ۔ ’’ مسند احمد ‘‘ میں ہے :

            ’’ عن یعلی بن مرة عن أبیه عن جده أنّ رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم انتهی إلی مضیق هو وأصحابه وهو علی راحلته، والسماء من فوقهم والبلة من أسفل منهم، فحضرت الصلاة، فأمر المؤذن، فأذّن وأقام، ثم تقدّم رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم علی راحلته، فصلی بهم یؤمي إیماءً یجعل السجود أخفض من الرکوع أو یجعل سجوده أخفض من رکوعه‘‘.  (4/174 ، المکتب الاسلامی للطباعۃ والنشر)

’’ المعجم الکبیر للطبرانی ‘‘ میں ہے :

            ’’ حدثنا عمرو بن عثمان بن یعلی عن أبیه عن جدّه قال : کان رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم في سفر، فأصابتنا السماء، فکانت البلة من تحتنا والسماء من فوقنا، وکان في مضیق، فحضرت الصلاة، فأمر رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم بلالاً فأذن وأقام، و تقدم رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم ، فصلی علی راحلته والقوم علی رواحلهم یؤمي إیماء یجعل السجود أخفض من الرکوع ‘‘.  (22/256، داراحیاء التراث العربی)

’’ سنن الدار قطنی ‘‘میں ہے :

            ’’ عن عمرو بن عثمان بن یعلی بن أمیة عن أبیه عن جده یعلی بن أمیة صاحب رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم قال: انتهینا مع النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم إلی مضیق، السماء من فوقنا والبلة من أسفلنا، و حضرت الصلاة، فأمر المؤذن، فأذّن و أقام … ثم تقدم النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم، فصلی بنا علی راحلته، وصلینا خلفه علی رواحلنا، وجعل سجوده أخفض من رکوعه‘‘ ۔ (1/299، دارالفکر)

            ’’ جامع الترمذی ‘‘ کی مذکورہ حدیث کے ذیل میں ’’ العرف الشذی ‘‘ میں حضرت شاہ صاحب علیہ الرحمۃ سے منقول ہے :

            ’’ قوله: فأذّن رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم … قال النووي : یدلّ الحدیث علی أنّه علیه السلام أذن بنفسه في هذه الواقعة، وقال الحافظ : سها النووي فإن في بعض طرق الحدیث : ’’أمر بلالاً لیؤذن ‘‘ ، وقال السیوطي في حاشیة السنة: إنّه علیه السلام أذّن في واقعة أخرٰی، وأتی بروایة من طبقات ابن سعد‘‘.  (1/95، قدیمی)

’’ نفع قوت المغتذی ‘‘ میں ہے :

            ’’ ( فأذن رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم علی راحلته) استدل به النووي وغیره علی أنّه صلی اللّٰه علیه وسلم باشر الأذان نفسه، وعلی ندب الجمع بین الأذان والإقامة، ذکره بشرح المهذب مبسوطًا و بالروضة مختصراً، و جاء ت روایة أخرٰی صریحة في ذلک بسنن سعید بن منصور، ومن قال : إنّه صلی اللّٰه علیه وسلم لم یباشر هذه العبادة بنفسه، وألغز فیه بقوله: ماسنة أمر بها صلی اللّٰه علیه وسلم ولم یفعلها؟ فقد غفل‘‘.  (1/94 قدیمی)

’’ الکوکب الدری ‘‘ میں ہے :

            ’’ والمسألة خلافیة شهیرة، وبحدیث الباب استدلّ النووي علی مباشرته صلی اللّٰه علیه وسلم الأذان بنفسه، قال الحافظ : ’’ جزم به النووي وقوّاه، لکن وجد في مسند أحمد من هذا الوجه: ’’فأمر بلالاً فأذّن، فعلم أن في روایة الترمذي  اختصاراً، وأن معنی ’’أذن‘‘ أمر بلالاً ، کما یقال : أعطی الخلیفة کذا، وإنّما باشر العطاء غیره، قاله ابن عابدین، وفي ’’ الدر المختار ‘‘ عن ’’ الضیاء ‘‘ : أنّه علیه السلام أذّن في سفر بنفسه وأقام، و صلی الظر ‘‘.  (1/179،180، مکتبہ یحیویۃ سہارنپور)

’’ مرقاۃ المفاتیح ‘‘ میں ہے :

’’ جزم النووي بأنّه علیه السلام أذن مرّة في السفر و استدلّ له بخبر الترمذي، ورد بأنّ أحمد أخرجه في مسنده من طریق الترمذي بلفظ: ’’ فأمر بلالاً فأذن ، ‘‘ وبه یعلم اختصار روایة الترمذي وأن معنی ’’ أذن ‘‘ فیها ’’ أمر بلالاً بالأذان ‘‘ ، کبنی الأمیر المدینة، و رواه الدار قطني أیضًا بلفظ : ’’ فأمر بلالاً فأذن ‘‘ ، قال السهیلي : والمفصل یقضي علی المجمل ‘‘.  (2/174، امدادیہ ملتان)

’’ فتح الباري شرح البخاري ‘‘ میں ہے :

            ’’ هل باشر النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم الأذان بنفسه … جزم النووي بأنّ النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم أذن مرةً في السفر، وعزاه للترمذي و قواه، ولکن وجدنا في مسند أحمد من الوجه الّذي أخرجه الترمذي  ولفظه: ’’ فأمر بلالاً فأذن ‘‘، فعرف أن في روایة الترمذي ، اختصاراً وأن معنی : ’’ قوله أذن أمر بلالاً به ‘‘ ، کما یقال : أعطی الخلیفة العالم الفلاني ألفًا، وإنّما باشر العطاء غیره، ونسب للخلیفة ؛ لکونه آمراً به ‘‘.  (2/102)

’’ شرح الزرقانی ‘‘ میں ہے :

            ’’ ومما یکثر السؤال عنه: هل باشر النّبيّ صلی اللّٰه علیه وسلم الأذان بنفسه، وقد روی الترمذي بإسناد حسن عن یعلی بن مرة الثقفي أنّ النّبي صلی اللّٰه علیه وسلم أذن في سفر، و صلی بأصحابه وهم علی رواحلهم، السماء من فوقهم والبلة من أسفلهم. قال السهیلي : فنزع بعض النّاس بهذا الحدیث أنّه صلی اللّٰه علیه وسلم أذن بنفسه، لکن روی الحدیث الدار قطني بسند الترمذي ومتنه، وقال فیه فأمر بالأذان فقام المؤذن فأذن ‘‘ ، والمفصل یقضي علی المجمل المحتمل، انتهی. وتبع هذا البعض النووي فجزم أنّ النّبيّ صلی اللّٰه علیه وسلم أذن مرّةً في سفره و عزاه للترمذي و قواه، وتعقبه الحافظ، فقال : ولکن و جدنا الحدیث في مسند أحمد من الوجه الّذي أخرجه منه الترمذي بلفظ : فأمر بلالاً فأذن ، فعرف أن في روایة الترمذي اختصاراً ، و أنّ معنی ’’ أذن ‘‘ أمر بلالاً به ‘‘.  (1/199، دارالکتب العلمیہ)

’’ تنویر الحوالک ‘‘ میں ہے :

            ’’ وهل یتصور أن توجد سنة أمر بها صلی اللّٰه علیه وسلم ولم یفعلها؟ ذکر ذلک في صلاة الضحٰی، وقد تبین خلافه، قلت : ورد أنّها کانت واجبة علیه، وعد الفقهاء ذلک في خصائصه، وذکر أیضًا في الأذان، لکن ثبت عند الترمذي أنّه صلی اللّٰه علیه وسلم أذن في سفر، و جزم به النووي في شرح المهذب، وقال : إن الحدیث جید الإسناد، وأشار إلیه في الروضة وقال : إن الحدیث حسن، و قال في الخلاصة: إنه صحیح‘‘.  (1/167، مطبع عبد الحمید احمد حنفی مصر)

            خلاصہ یہ ہے کہ نومولود بچہ کے کان میں اذان دینا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے قطعی طور پر ثابت ہے۔

             باقی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز کے لیے اذان دینے کے بارے میں محدثین کے مابین اختلاف ہے۔

            نیز الامام المحدث الفقیہ مولانا محمد عبد الحی لکھنوی علیہ الرحمۃ نے اپنے ایک رسالہ بنام ’’خیر الخبر في أذان خیر البشر ‘‘ میں ائمہ محدثین کے درمیان اختلاف ذکر کرنے کے بعد تحریر فرمایا کہ ابھی تک اس بارے میں کسی نے کوئی حتمی رائے قائم نہیں کی، لہٰذا ہمیں بھی اس بارے میں توقف ہی اختیار کرنا چاہیے ۔

’’خیر الخبر في أذان خیر البشر مشمولة مجموعة رسائل اللکنوي‘‘ میں ہے :

            ’’إنّما الخلاف في أذان الصلاة هل باشر به رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیه وسلم أم لا؟ وأمّا مطلق الأذان فلا شک في مباشرته به … وبالجملة مباشرة الرسول صلی اللّٰه علیه وسلم بالأذان في أذن المولود ثابت قطعًا، وأمّا مباشرته بأذان الصلاة فنحن نتوقف إلی الآن في ذلک‘‘.  (4/326، صفحۃ الرسالۃ، 6، ادارۃ القرآن)

            نیزمولانا عبد الحی لکھنو ی رحمۃ اللہ علیہ نے اپنے اسی رسالہ میں ’’ترک مباشرة الأذان‘‘ ( بنفسِ نفیس اذان نہ دینے ) کی چند وجوہات ذکر کی ہیں ، جن میں زیادہ صحیح اور قوی وجہ یہ لکھی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے اذان نہ دینے میں در حقیقت خلفائے راشدین کے مشقت میں پڑنے اور احکامِ شرعیہ میں خلل واقع ہونے کے اندیشہ سے بچنا تھا وہ اس طرح کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جب بھی کوئی کام شروع فرماتے تو پھر اس پر مواظبت اور مداومت اختیار فرماتے ، جب کہ منصبِ رسالت اور احکامِ شرعیہ ( مثلاً  کفار سے قتال ، لوگوں کے درمیان فیصلے وغیرہ ) جیسی بڑی ذمہ داری انجام دینی تھی، جو اذان سے زیادہ اہم اور ضروری تھی، اگر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اذان دیتے اور اس پر مواظبت فرماتے ( تو اس طرح نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اتباع میں خلفائے راشدین کو بھی مواظبت کرنی پڑتی ) جس کی بنا پر دوسرے اہم امور میں خلل واقع ہونے کا اندیشہ تھا ؛ اس لیے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اذان نہیں دی ۔

’’خیر الخبر في أذان خیر البشر ‘‘ میں ہے :

            ’’ ومنها: وهو أصحها وهو العذر عن ترک الخلفاء الراشدین هذه العبادة ما ذکره ابن عبد السلام من أنّه کانت عادة النّبيّ  صلی اللّٰه علیه وسلم أنّه إذا کان عمل عملاً واظب علیه، وکان هو قائمًا بأعباء الرسالة ومصالح الشریعة، کالقتال والفصل بین النّاس وغیر ذلک الّتي هي خیر من الأذان، فلو واظب علی الأذان لوقع الخلل في هذه الأمور المهمة‘‘. (4/328، صفحۃ الرسالۃ، 8، ادارۃ القرآن) (ماخذ فتاوی جامعہ بنوری ٹاؤن، غیر مطبوع) فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004201133

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے