بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

کھڑے ہو کر پیشاب کرنے کا حکم


سوال

 ہم لوگ جس جگہ کام کرتے ہیں وہاں پر بیٹھ کر پیشاب کرنے کی سہولت موجود نہیں ہے، اور جہاں پر بیٹھ کر پیشاب کرنے کی سہولت موجود ہے وہاں بار بار ہم لوگ جا نہیں سکتے!

جواب

شریعتِ مطہرہ میں بیٹھ کر ہی پیشاب کرنے کا حکم دیا گیا ہے ، بغیر عذرکھڑے ہوکر پیشاب کرنا مکروہ ہے۔  رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا معمول بھی بیٹھ کر ہی پیشاب کرنے کا تھا اور آپ ﷺ نے کھڑے ہوکر پیشاب کرنے سے منع فرمایاہے ؛ اس لیے پہلی کوشش تو یہی کریں کہ جس جگہ بیٹھ کر پیشاب کرنے کی سہولت  موجود ہے وہیں جائیں، لیکن اگر بار بار وہاں نہ جاسکتے ہوں تو  مجبوری میں دوسری جگہ چلے جائیں اور اس بات کا پورا خیال رکھیں کہ پیشاب کے چھینٹے بدن یا کپڑوں پر نہ آئیں اور اگر چھینٹے آ  جائیں تو اس کو دھو لیں، پیشاب کی چھینٹیں لگی رہنے کی صورت میں اگر وہ ایک درہم کی مقدار یا اس سے زیادہ ہوں تو ایسے کپڑوں میں نماز ادا کرنا جائز نہیں ہوگا۔

سنن الترمذي ت بشار (1/ 62)
'' عن عائشة، قالت: من حدثكم أن النبي صلى الله عليه وسلم كان يبول قائماً فلا تصدقوه ، ما كان يبول إلا قاعداً ''.
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909200589

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے