بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

21 جمادى الاخرى 1441ھ- 16 فروری 2020 ء

دارالافتاء

 

کریڈٹ کارڈ بنوانے کا حکم


سوال

کریڈٹ کارڈ کا استعمال حلال یا حرام؟ اور کن شرائط  پر استعمال حلال ہے؟  برائے  مہربانی جواب عنایت فرمائیے!

جواب

کریڈٹ کارڈ کے حصول کی شرائط میں سے ایک شرط یہ بھی ہوتی ہے کہ اگر کارڈ ہولڈر مقررہ تاریخ  تک رقم بینک کو  واپس نہیں کرے گا  تو  بینک تاخیر  کی بنا پر اضافی رقم وصول کرے گا، یہ شرط سودی ہے،  جس طرح سود حرام ہے، اسی طرح سود کے حصول کی شرط لگانا بھی حرام ہے، مذکورہ شرط تسلیم کیے بغیر کریڈٹ کارڈ کا حصول نا ممکن ہوتا ہے،  نیز کریڈٹ کارڈ کے استعمال میں عموماً لوگ سود میں مبتلا ہو ہی جاتے ہیں؛ لہذا کریڈٹ کارڈ بنوانا اور اس کا استعمال ناجائز ہے، اس سے اجتناب ضروری ہے۔ اور اگر کسی نے ناواقفیت کی وجہ سے کریڈٹ کارڈ بنوا لیا ہو تو اس صورت میں اسے توبہ استغفار کرنا چاہیے اور جلد از جلد اس کارڈ سے چھٹکارا حاصل کرلینا چاہیے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144104200490

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے