بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

24 جمادى الاخرى 1441ھ- 19 فروری 2020 ء

دارالافتاء

 

ڈھائی تولہ سونا ملکیت میں ہونے کی صورت میں قربانی کے وجوب کا حکم


سوال

میری بہن کے پاس ڈھائی تولہ سونا ہے اور وہ گھر میں بچوں کو ٹیوشن پڑھاتی ہے،  جس سے ماہانہ دو ہزار روپے ملتے ہیں،  لیکن وہ اپنی ضروریات میں خرچ ہوجاتے ہیں، آیا اس پر قربانی واجب ہوگی یانہیں؟

جواب

جب نقدی ضرورت کے لیے ہوتی ہے اور خرچ بھی ہوجاتی ہے تو اس نقدی کو تو نصاب میں شامل نہیں کیا جائے گا، اور عید الاضحٰی کے ایام میں بھی اگر یہی حالت ہو کہ ڈھائی تولہ کے ساتھ ضرورت سے زائد رقم یا کوئی بھی سامان موجود نہ ہو تو قربانی واجب نہیں ہوگی۔ اور اگر عید الاضحیٰ کے ایام میں ڈھائی تولہ سونے کے ساتھ ضرورت سے زائد کوئی سامان یا ضرورت سے زائد نقد رقم موجود ہو تو چوں کہ مجموعی مالیت ساڑھے باون تولہ چاندی سے زیادہ ہوجائے گی؛ اس لیے اس صورت میں قربانی واجب ہوگی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010201233

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے