بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

والدہ کی میراث میں اولاد کا حصہ


سوال

 میرے نانا 18سال پہلے فوت ہوئے اور میری والدہ 3سال پہلے. ہم ایک بھائی  اور چار بہنیں ہیں. میری نانی نے اپنی جائیداد اب تقسیم کی ہے،   جس میں میری والدہ کا حصہ بھی آیا ہے،  علماءِ  کرام قرآن وسنت کی روشنی میں کیا فرماتے ہیں کہ والدہ کے بعد ان کی اس میراث جو تقریباً  7 لاکھ کے برابر ہے اس کی وراثت شریعت کے مطابق کیسے تقسیم ہوگی ؟ مجھے سب نے بولا کہ والدہ کا وارث صرف بیٹا ہوتا ہے پر دل کو تسلی نہیں ہو رہی،  کہیں گناہ گار نہ ہو جاؤں !

جواب

والدہ  کی میراث میں جس طرح بیٹے کا حصہ ہوتا ہے اسی طرح بیٹیوں کا بھی حصہ ہوتا ہے، اگر آپ کے والد حیات نہیں ہیں تو  والدہ کی میراث 6 حصوں میں تقسیم کرکے 2 حصے بیٹے کو اور ایک ایک حصہ ہر بیٹی کو ملے گا، یعنی 700000 روپے میں سے 233333.33 روپے بیٹے کو اور 166666.66روپے ہر  بیٹی کو ملیں گے ۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144012201054

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے