بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 22 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

میاں گروپ آف چکوال / قسطوں پر کاروبار کا حکم


سوال

میاں گروپ آف چکوال ایک کمپنی ہے چیزیں قسطوں پر دیتی ہے، آیا قسط پر کاروبار کرنا جائز ہے؟ اور اس کمپنی میں نوکری کرنا کیسا ہے؟

جواب

قسطوں پر خرید و فروخت جائز ہے، بشرطیکہ مجلسِ عقد میں ہی یہ طے ہوجائے کہ خریدنے والا ادھار خریدے گا یا نقد، نیز  مجموعی قیمت مقرر کرلی جائے، اورکسی قسط کی قبل ازوقت ادائیگی یا تاخیر کی صورت میں مقررہ قیمت میں کمی بیشی نہیں کی جائے گی، پس مذکورہ شرائط کو ملحوظ رکھتے ہوئے میاں گروپ آف چکوال اگر قسطوں پر تجارت کرتا ہو اور ناجائز و حرام اشیاء فروخت بھی نہ کرتا ہو تو ان کا کاروبار حلال ہوگا اور اس کمپنی میں نوکری کرنا بھی جائز ہوگا. بصورتِ  دیگر کاروبار حلال نہ ہوگا۔

مذکورہ گروپ کے کاروبار کے جائز یا ناجائز ہونےکا مدار ان کے طریقہ کار پر ہے، اور اس کا جواب کاروبار کی شرائط اور تفصیل دیکھ کر ہی دیا جاسکتاہے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200874

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے