بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 14 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

قوالی کی شرعی حیثیت


سوال

جو قوالی ڈھول اور میوزک سے پاک ہو،  اس کو سن سکتے ہیں؟

جواب

اگر قوالی میں موسیقی وغیرہ نہ ہو اور اس کے اشعار میں شریعت کی تعلیمات کے خلاف کوئی بات نہ ہو  تو ایسے اشعار کا سننا جائز ہو گا،  لیکن اگر قوالی کے اشعار میں خلافِ شرع باتیں ہوں جیسا کہ فی زمانہ دیکھا جاتا ہے  تو ایسی قوالی کا سننا جائز نہ ہو گا۔

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (6/ 349):
"قال الشارح: زاد في الجوهرة: وما يفعله متصوفة زماننا حرام لا يجوز القصد والجلوس إليه ومن قبلهم لم يفعل كذلك، وما نقل أنه - عليه الصلاة والسلام - سمع الشعر لم يدل على إباحة الغناء. ويجوز حمله على الشعر المباح المشتمل على الحكمة والوعظ".
 فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010200462

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے