بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 23 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

قسطوں پر خریدے گئے تجارتی پلاٹ پر زکات


سوال

ایک آدمی نے تجارت کی نیت سے دس لاکھ کے عوض قسطوں پر پلاٹ خریدا ہے جس میں سے تقریباً چار لاکھ ادا کر دیے ہیں، تو کیا اس مشتری پر ادا کردہ چار لاکھ کی زکاۃ واجب ہے یا دس لاکھ کی ؟ حال آں کہ اس پر اسی پلاٹ کا چھ لاکھ قرض باقی ہے. مشتری کو پلاٹ کا قبضہ دیا ہو تو کیا حکم ہوگا قبضہ نہ دیا ہو تو کیا حکم ہوگا؟ ہر دو صورتوں کی وضاحت فرمائیں!

جواب

مذکورہ پلاٹ کی جتنی قسطیں رواں سال ادا کرنا طے ہیں، انہیں منہا کرنے کے بعد پلاٹ کی موجودہ قیمت (خواہ وہ دس لاکھ سے زیادہ ہو یا کم) کی زکاۃ ادا کرنا لازم ہوگی چاہے قبضہ دیا ہو یا نہ دیا ہو۔لہٰذا اگر بقیہ چھ لاکھ روپے اسی سال ادا کرنا ضروری ہے تو چھ لاکھ روپے منہا کرکے پلاٹ کی موجودہ مالیت کی زکات ادا کرنی ہوگی، اور اگر پورے چھ لاکھ کی ادائیگی اسی سال لازم نہیں ہے تو اس سال جتنی قسطیں ادا کرنی ہیں اسی کے بقدر رقم منہا کی جائی گی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143908200769

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے