بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 14 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

قراءت کی غلطی سے نماز کا حکم


سوال

تراویح میں.﴿ اُولٰئِكَ هُمْ خَيْرُ الْبَرِيَّةِ﴾  کی جگہ  ''اولئك هم شر البرية''  پڑھ لیا .نماز کا کیا حکم ہے ?

جواب

اگر کسی نے نماز میں ﴿ اُولٰئِكَ هُمْ خَيْرُ الْبَرِيَّةِ﴾  کی جگہ  ''اولئك هم شر البرية''  پڑھ لیا اور دورانِ نماز غلطی کی تصحیح بھی نہیں کی  تو  یہ ایسی غلطی ہے جس سے معنیٰ بالکل برعکس ہو گیا؛ اور اس غلطی  کی وجہ سے نماز فاسد ہو گئی۔ فقط واللہ اعلم 


فتوی نمبر : 143909200649

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے