بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 21 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

فجر پڑھے بغیر عید پڑھنا


سوال

ہمارے یہاں عید کے دن یہ مسئلہ بیان ہوا کہ جس نے عید کے دن فجر کی نماز نہیں پڑھی اس کی عید کی نماز نہیں ہوگی، کیا یہ درست ہے؟ اگر درست نہیں ہے تو پھر ایسا غلط مسئلہ عوام کے درمیان کیوں مشہور ہے؟

جواب

یہ بات واضح ہے کہ فجر کی نماز فرض ہے اور عید کی واجب ہے،لہذا فجر کی نماز زیادہ اہمیت کی حامل ہے، لیکن فجرکی نماز نہ پڑھنے کی صورت میں بھی عید کی نماز ادا ہوجائے گی ۔ 

"وفي الحجة: وإذا قضی صلاة الفجر قبل صلاة العید لابأس به، ولولم یصل صلاة الفجر لایمنع جواز صلاة العید …" ( الفتاوی التاتارخانیة، ۲ / ۷۵ ) 
’’ إذا قضی صلاة الفجر قبل صلاة العید لابأس به، ولولم یصل صلاة الفجر لایمنع جوازصلاة العید …" ( الهندیة، ۱ / ۱۵۰ ) 
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200045

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے