بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

11 ربیع الثانی 1441ھ- 09 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

غیر مسلم کے ساتھ کھانے کا حکم


سوال

میں یہ جاننا چاہتا ہوں کہ غیر مذہب (ہندو) کے  ساتھ  کھانے  پینے  یا  اس  کے  گھر  سے  کھانے  پینے اور مزید یہ کہ اہلِ  کتاب کے ساتھ یا اس کے گھر سے کھانے پینے کے بارے میں کیا احکامات ہیں؟ 

جواب

غیر مسلم کے ہاتھ اور منہ پر ظاہری نجاست نہ لگی ہو تو اس کے ساتھ کھانا  کھانے میں کوئی حرج نہیں، خواہ وہ غیر مسلم ہندو ہو یا عیسائی یا کچھ اور. البتہ ایسا اختلاط جس سے دینی حمیت ختم ہونے کا اندیشہ ہو  تو  ایسے کفار  سے میل جول رکھنے اور ان کے ساتھ کھانے پینے سے احتیاط کرنا چاہیے۔ اور ان سے دلی تعلق بہر حال ناجائزہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144012201513

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے