بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 شوال 1441ھ- 27 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

عورت اگر یہ کہے کہ اپنے شوہر کے علاوہ  سب لوگوں کے جسم مجھ پر حرام ہیں


سوال

عورت اگر یہ کہےکہ اپنے شوہر کے علاوہ  سب لوگوں کے جسم مجھ پر حرام ہیں تو  اگر اس عورت کو طلاق ہو جائے تو وہ عورت دوسرے مرد سے شادی کر سکتی ہے؟

جواب

مذکورہ عورت کا یہ جملہ کہ’’اپنے  شوہر کے علاوہ سب لوگوں کے جسم مجھ پر حرام ہیں‘‘ اگر اس نیت سے تھا کہ یہ اس شوہر کے نکاح میں ہے؛  اس  لیے باقی لوگوں کے جسم حرام ہیں تو  یہ اس شوہر کے نکاح میں ہوتے ہوئے حقیقت پر مبنی جملہ ہے؛ اس لیے اگر مذکورہ شوہر سے طلاق ہوجائے تو عدت کے بعد  کسی اور جگہ نکاح شرعاً جائز ہے،  مذکورہ جملے سے بعد والے نکاح پر اثر نہیں پڑے گا۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144105200782

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے