بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

عمرہ میں سعی بھول کر چھوڑنے کے بعد دم ادا کرلیا تو عمرہ کا کیا حکم ہے؟


سوال

عمرہ کرتے ہوئے بغیر سعی کے احرام کھول دیا اور دم ادا کیا تو کیا اس سعی کی قضا یا عمرہ کی قضا ضروری ہے؟

جواب

اگر عمرہ میں طواف کےبعد  بھول سے سعی چھوڑدی اور احرام کھول دیا اور دوبارہ اس کا اعادہ بھی نہیں کیا تو دم لازم ہوگیا، دم ادا کرلینے کے بعد اب دوبارہ سعی یا عمرہ کو لوٹانا ضروری نہیں ہے، عمرہ ادا ہوجائے گا؛ اس لیے کہ سعی واجبات میں سے ہے، اور دم سے اس کا نقصان پورا ہوجاتا ہے۔

المبسوط للسرخسي (4 / 50):
"(قال:) وإن ترك السعي فيما بين الصفا، والمروة رأسًا في حج أو عمرة فعليه دم عندنا، وهذا؛ لأن السعي واجب، وليس بركن عندنا، الحج والعمرة في ذلك سواء، وترك الواجب يوجب الدم ...، وجحتنا في ذلك قوله تعالى: {فمن حج البيت أو اعتمر فلا جناح عليه أن يطوف بهما} [البقرة: 158]، ومثل هذا اللفظ للإباحة لا للإيجاب فيقتضي ظاهر الآية أن لايكون واجبًا، ولكنا تركنا هذا الظاهر في حكم الإيجاب بدليل الإجماع، فبقي ما وراءه على ظاهره".

البناية شرح الهداية (4 / 362):
"ومن ترك السعي بين الصفا والمروة فعليه دم وحجه تام؛ لأن السعي من الواجبات عندنا فيلزم بتركه دم دون الفساد.

(ومن ترك السعي بين الصفا والمروة فعليه دم وحجه تام؛ لأن السعي من الواجبات عندنا) ش: وعند الشافعي ركن، وعندنا واجب م: (فيلزم بتركه الدم دون الفساد) ش: لأن كل نسك ليس بركن فالدم يقوم مقامه كالرمي، قوله: دون الفساد احترازًا عن قول مالك، وأحمد فإن السعي ركن عندهما فيلزم الفساد بتركه".

الفتاوى الهندية (1 / 247):
"ومن ترك السعي بين الصفا والمروة فعليه دم وحجه تام، كذا في القدوري". 
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144104200022

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے