بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 شعبان 1441ھ- 07 اپریل 2020 ء

دارالافتاء

 

سید کے لیے عقیقے کا گوشت کھانا


سوال

عقیقہ کا گوشت صدقہ کا ہے یا نہیں ؟  اگر صدقہ ہے تو سید تو صدقہ نہیں کھاسکتے!

جواب

عقیقہ کے گوشت  کا حکم قربانی کے گوشت کے حکم کی طرح ہے، جس طرح قربانی کا گوشت خود قربانی کرنے والا بھی کھاسکتاہے، اور اس میں سے مال دار اور سید بھی کھاسکتے ہیں، اسی طرح عقیقے کا گوشت سید اور مال دار بھی کھاسکتے ہیں۔

نیز قربانی کے گوشت کی تقسیم کی طرح عقیقے کے گوشت میں بھی مستحب ہے  کہ اس کے تین حصے کیے جائیں، ایک حصہ اپنے لیے رکھا جائے، اور ایک حصہ عزیز و اقارب میں تقسیم کیا جائے اور ایک حصہ فقراء میں تقسیم کیا جائے۔ تاہم یہ حکم وجوبی نہیں ہے۔  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144103200181

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے