بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 شعبان 1441ھ- 29 مارچ 2020 ء

دارالافتاء

 

سامانِ تجارت میں زکات قیمتِ خرید پر ہو گی یا قیمتِ فروخت پر؟


سوال

سامانِ تجارت دکان میں رکھا ہوا ہو بشرطیکہ  بکا ہوا نہ ہو،  زکات قیمتِ خرید پر آئے گی یا قیمتِ فروخت پر؟

جواب

مالِ تجارت کی زکات کی ادائیگی میں قیمتِ فروخت کا اعتبار ہے، یعنی  زکات کی ادائیگی کے وقت اس بازار میں اس کی جو قیمتِ فروخت  ہے، اس حساب سے اس کی زکات ادا کی جائے گی۔

المبسوط للسرخسي (2/ 190):
"وكذلك زكاة مال التجارة تجب بالقيمة".

الموسوعة الفقهية الكويتية (34/ 132):
"قيمة
التعريف:
1 - القيمة في اللغة: الثمن الذي يقوم به المتاع، والقيمة واحدة القيم، وهي ثمن الشيء بالتقويم.
وفي الاصطلاح: ما قوم به الشيء بمنزلة المعيار من غير زيادة ولا نقصان ... " الخ  فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144107200837

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے