بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

11 شوال 1441ھ- 03 جون 2020 ء

دارالافتاء

 

روزے کی حالت میں کان میی پانی جانے کا حکم


سوال

روزے  کی حالت میں کان میں پانی چلاجائے تو کیا روزہ ٹوٹ جاتاہے؟

جواب

روزے کی حالت میں کان میں  پانی  خود چلاجائے تو روزہ  نہیں ٹوٹتا۔

قال في الشامیة:

"أو أدخل الماء في أذنه، وإن کان بفعله اختاره في الهدایة والتبین، وصححه في المحیط، وفي الولوالجیة أنه المختار، وفصّل في الخانیة بـ : أنه إن دخل لایفسد وإن أدخله یفسد في الصحیح؛ لأنه وصل إلی الجوف بفعله فلایعتبر فیه صلاح البدن، ومثله فی البزازیة، واستظهره في الفتح والبرهان، شرنبلالیة ملخصًا․ والحاصل الاتفاق علی الفطر لصبب الدهن وعلی عدمه بدخول الماء واختلف التصحیح في إدخاله"․ (الشامیة: ۳/۳۶۷) فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144107200668

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے