بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 14 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

دوسری طلاق کے بعد رجوع


سوال

میرے شوہر نے مجھے طلاق دی، دس دن بعد رجوع کر لیا، پھر چار سال بعد دوبارہ طلاق دی، اور پھر مہینے کے اندر اندر رجوع کر لیا. کیا فتوی ہو گا؟ کیا مجھے دوبارہ ان سے نکاح کرنا ہو گا؟ یا ہم پہلے کی طرح زندگی گزار سکیں گے؟

جواب

اگر آپ کے شوہر نے آپ کو طلاقِ رجعی دی ہے،تو شوہر  عدت کے اندررجوع کرکے  دوبارہ ساتھ رہ سکتا ہے، لیکن اس کے بعد صرف ایک ہی طلاق دینے کا اختیار رہے گا، اور اگر طلاقِ بائن دی ہے تو اس صورت میں دوبارہ نئے مہر کے ساتھ نکاح کیے بغیر ساتھ رہنا جائز نہیں۔

’’وإذاطلق الرجل امرأته، تطلیقةً رجعیةً، أوتطلیقتین، فله أن یراجعها في عدتها، رضیت بذلک أولم ترض‘‘. (الهندیة،  ۱/۴۷۰)فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144003200177

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے