بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 19 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

خلع کی ڈگری کا حکم


سوال

 ایک خاتون اپنے شوہر سے ناراض ہوگئی،باپ کے گھر بیٹھ گئی۔کچھ ماہ بعد عدالت میں خلع کی درخواست دائر کرکے موقف اپنایاکہ اس کے شوہر نے اسے چارماہ قبل طلاق دی تھی۔اسے خلع دلایاجائے۔ شوہر کااصرار ہے کہ اس نے بیوی کو طلاق نہیں دی۔  تاہم عدالت نے لڑکی کی درخواست پر کچھ ماہ سماعت کے بعدخلع کی ڈگری جاری کردی ۔اب لڑکی اس شوہر کے پاس پھرآناچاہتی ہے توشریعت کیاکہتی ہے؟

جواب

اگر واقعۃً  شوہر نے طلاق نہیں دی اور اس پر شوہر حلف  بھی اٹھالے تو یہ طلاق واقع نہیں ہوئی۔ اور اگرشوہر نے  عدالت کی جانب سے جاری کردہ  خلع کی ڈگری کو  زبانی یا تحریری طور پر تسلیم نہیں کیا تو خلع بھی نہیں ہوا ، اس لیے اب تک دونوں میں  نکاح قائم ہے اور بیوی  اپنے شوہر کے ساتھ رہ سکتی ہے۔ نیز  بیوی نے جھوٹا دعوی کیا تھا  اور بعد میں اس کو خود تسلیم کیا  تو اس گناہ سے توبہ کرنا لازم ہے؛ اس لیے کہ حدیث میں ہے:

"عن علي قال: البهتان على البراء أثقل من السماوات. الحكيم". (کنز العمال:8810)

حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ کسی بے گناہ آدمی  پر الزام لگانا آسمانوں سے بڑا جرم ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909201044

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے