بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ذو الحجة 1441ھ- 07 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

بغیر احرام میقات میں داخل ہونے کا دم کیسے ساقط ہوگا؟


سوال

اگر آدمی میقات سے بغیر احرام کے گزر جائے تو دم کیسے ساقط ہو گا؟

جواب

میقات سے بغیر احرام کے گزر جانے کی صورت میں دوبارہ میقات کی طرف لوٹ کر(خواہ وہی میقات ہو یا دوسرا) احرام کی حالت میں میقات میں داخل ہوجانے سے دم ساقط ہوجائےگا.

الفتاوى الهندية (1 / 253):
"إذا دخل الآفاقي مكة بغير إحرام وهو لايريد الحج والعمرة فعليه لدخول مكة إما حجة أو عمرة، فإن أحرم بالحج أو العمرة من غير أن يرجع إلى الميقات؛ فعليه دم لترك حق الميقات، وإن عاد إلى الميقات وأحرم، فهذا على وجهين: فإن أحرم بحجة أو عمرة عما لزمه خرج عن العهدة".

تحفة الفقهاء (1 / 396):
"ولو عاد إلى ميقات آخر سوى الميقات الذي جاوزه من غير إحرام وجدد التلبية قبل أن يتصل إحرامه بأفعال الحج أو العمرة فهو كما لو عاد إلى ذلك الميقات". فقط و الله أعلم


فتوی نمبر : 144107200207

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں