بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

الفاظِ کنایہ میں پانچ سال بعد طلاق کی نیت کرنا


سوال

زید نے بیوی کو طلاقِ کنایہ کے الفاظ کہے اس وقت زید  کی نیت نہیں تھی, پانچ سال بعد زید نے نیت کی، طلاق واقع ہوگی یا نہیں؟

جواب

الفاظِ کنایہ سے اس وقت طلاق واقع ہوتی ہے جب شوہر ان الفاظ کی ادائیگی سے طلاق دینا چاہتاہو، اگر الفاظِ کنایہ کے استعمال کے وقت شوہر  کی نیت طلاق کی نہ ہو تو ان الفاظ سے طلاق واقع نہیں ہوتی؛ لہذا صورتِ مسئولہ میں جب پانچ سال قبل زید نے الفاظِ کنایہ استعمال کیے اور ان الفاظِ کنایہ کے استعمال کے وقت زید نے طلاق دینے کی نیت نہیں کی تھی تو  اب پانچ سال بعدمحض  نیت کرنے سے ان الفاظ کے ذریعہ کوئی طلاق واقع نہ ہوگی۔ فتاوی شامی میں ہے:

"باب الكنايات

(كنايته) عند الفقهاء (ما لم يوضع له) أي الطلاق (واحتمله وغيره (ف) الكنايات (لاتطلق بها) قضاء (إلا بنية أو دلالة الحال) وهي حالة مذاكرة الطلاق أو الغضب ... (تتوقف الأقسام) الثلاثة تأثيرًا (على نية) للاحتمال، والقول له بيمينه في عدم النية". (3/296)فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144106201348

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے