بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 شوال 1441ھ- 31 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

احرام کی حالت میں ٹڈی یا کیڑا مارنا


سوال

احرام کی حالت میں اگر کوئی جان دار  چیز مثلاً: ٹڈی،  کیڑے مکوڑے مار دیے جائیں اور پھر یاد آیا کہ میں تو احرام کی حالت میں تھا،عمرہ مکمل کر لیا تھا اس کے  بعد ایک ٹڈی مار دی، ابھی حلق نہیں کروایا تھا، اس کا کیا حکم ہے ؟ اور اگر حلق کروا لیا ہو، پھر اس کا کیا حکم ہے؟

جواب

اگر احرام کی حالت میں حلق کروانے سے پہلے  تین سے کم ٹڈیاں ماریں تو  جو سہولت  ہو  اتنی مقدار رقم صدقہ کرے اور اگر تین سے زیادہ ٹڈیاں ماری ہیں تو ایک صدقہ فطر کی مقدار رقم صدقہ کرے۔

اگر حلق کرنے کے بعد حدودِ حرم میں ٹڈی ماری تو اس میں بھی یہی تفصیل ہے۔

احرام کی حالت میں یا حدود حرم میں  کیڑے مکوڑے  مارنے کی وجہ سے کوئی جزاء لازم نہیں ہوتی ۔

رد المحتار (2 / 569) ط:سعید:

"( وبقتل قملة) من بدنه أو إلقائها أو إلقاء ثوبه في الشمس لتموت (تصدق بما شاء كجرادة، ويجب الجزاء فيها) أي القملة (بالدلالة كما في الصيد، و) يجب (في الكثير منه نصف صاع، و) الكثير (هو الزائد على ثلاثة)  والجراد كالقمل، بحر ... (ولا شيء بقتل غراب) إلا العقعق على الظاهر ظهيرية، وتعميم البحر رده في النهر (وحدأة) بكسر ففتحتين وجوز البرجندي فتح الحاء (وذئب وعقرب وحية وفأرة) بالهمزة وجوز البرجندي التسهيل (وكلب عقور) أي وحشي، أما غيره فليس بصيد أصلا (وبعوض ونمل) لكن لا يحل قتل ما لايؤذي".

و في الرد:

"وفصل في اللباب بأن في الواحدة تصدقا بكسرة، وفي الاثنين  والثلاث قبضة من طعام، وفي الزائد مطلقا نصف صاع (قوله: والجراد كالقمل) قال في البحر: ولم أر من تكلم على الفرق بين الجراد القليل والكثير كالقمل. وينبغي أن يكون كالقمل، ففي الثلاث وما دونها يتصدق بما شاء وفي الأكثر نصف صاع ... (قوله: وكذا جميع هوام الأرض) الأولى إبدال جميع بباقي لأن ما قبله من الهوام وهي جمع هامة كل حيوان ذي سم، وقد تطلق على مؤذ ليس له سم كالقملة؛ أما الحشرات فهي جمع حشرة: وهي صغار دواب الأرض كما في الديوان ط عن أبي السعود ... وكذا جميع هوام الأرض لأنها ليست بصيود ولا متولدة من البدن". فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144007200148

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے