بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ربیع الثانی 1441ھ- 14 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

’’کوشر‘‘ یہودی کھانا

’’کوشر‘‘ یہودی کھانا

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ: میری بیٹی بنام اسماء اپنے اہل وعیال کے ساتھ امریکہ میں عرصۂ دراز سے قیام پذیر ہے، وہ آپ سے کچھ سوال کرنا چاہتی ہے، جو مندرجہ ذیل ہیں: ۱:…کیا کوشر (Kosher) جو معروف یہودی کھانا بتایا جاتا ہے، ایک مسلمان کے لیے شرعاً جائز ہے؟ اگر ہے تو اسلامی رو سے کیا دلیل ہے؟ اور اگر نہیں ہے تو کیا وجہ ہے؟ ۲:…حلال اور ذبیحہ میں کیا فرق ہے؟  لغت کی رو سے حلال حرام کا متضاد ہے اور جائز درست ذبح کیا ہو۔  لغت کی رو سے ذبیحہ یعنی قربانی کا جانور جو شرعی طور پر ذبح کیا ہو۔  آپ سے استدعاہے کہ دونوں سوالوں کا جواب عنایت فرماکر ہمیں سرفراز فرمائیں۔                                                                 مستفتی:نسیم حضرت جی الجواب باسمہٖ تعالٰی واضح رہے کہ ’’کوشر‘‘ یہودیوں کے ہاں ان کے مذہب کے مطابق اسی معنی میں استعمال ہوتا ہے، جس معنی میں ہم ’’حلال‘‘ کا لفظ استعمال کرتے ہیں۔ ’’کوشر ذبیحہ‘‘ حلال کردہ جانور کے لیے استعمال ہوتاہے جس کو ہم ’’حلال ذبیحہ‘‘ بھی کہتے ہیں۔ یہودیوں کے ذبیحہ کا حکم یہ ہے کہ: اگر یہودی اپنے مذہب کی تعلیمات کے مطابق ذبح کرنا جانتا ہو اور اس کا التزام بھی کرتا ہو،بالخصوص! اللہ کا نام لے کر اچھی طرح رگوں کو کاٹ دے تو اس کا ذبیحہ اُصولِ مذہب کے مطابق اہل کتاب کا ذبیحہ ہونے کی بنا پر حلال ہوگا۔ البتہ موجودہ دور کے اکثر یہود ونصاریٰ حقیقی معنوں میں اپنی کتابوں کی تعلیمات سے واقف ہوتے ہیں، نہ ہی اپنی کتابوں کی تعلیمات کے مطابق عمل کرنے کا اہتمام کرتے ہیں، بلکہ اکثر مادہ پرست اور دہریہ نظریات کے حامل ہوتے ہیں، جس کی بناپر اُنہیں اہل کتاب شمار کرنا مشکل ٹھہرتاہے، اس لیے ان کا ذبیحہ مطلقاً حلال نہیں ہوگا، بلکہ کم از کم مشتبہ ٹھہرتا ہے، لہٰذاان کے ذبیحہ سے احتراز کیاجائے۔ فی القرآن الکریم:  ’’وَطَعَامُ الَّذِینَ أُوْتُوْا الْکِتَابَ حِلٌ لَّکُمْ‘‘۔                             (المائدۃ:۵) وفی التنویر: ’’وشرط کون الذابح مسلمًا أو کتابیًا ذمیًا أو حربیًا۔‘‘  (ج:۶،ص:۲۹۷،ط:سعید) وفی الشامیۃ: ’’ومقتضی الدلائل الجواز (ذبیحۃ أہل الکتاب) کما ذکرہ التمرتاشی فی فتاواہ، والأولی أن لایأکل ذبیحتہم ولایتزوج منہم إلا للضرورۃ کما حققہ الکمال بن الہمام۔‘‘                            (فتاویٰ شامی، ج:۶،ص:۲۹۷،ط:سعید) وفی التفسیر المظہری:  ’’روی ابن الجوزی بسندہٖ عن علیؓ قال: لاتأکلوا من ذبائح نصارٰی بنی تغلب فإنہم لم یتمسکوا من النصرانیۃ بشئ إلا شربہم الخمر، رواہ الشافعیؒ بسند صحیح عنہ۔‘‘                                           (تفسیر مظہری، ج:۳،ص:۳۴) ۲:…واضح رہے کہ ’’ذبیحہ‘‘ ہراس حیوان کو کہا جاتاہے جس کو ذبح کیاجائے، پھر اگر اس کو شرعی طریقہ پر ذبح کیا جائے‘ اس کو ’’حلال ذبیحہ‘‘ کہا جاتا ہے۔ اور اگر اس کو شرعی طریقہ پر ذبح نہ کیا جائے تو اس کو ’’مردار‘‘ اور ’’حرام ذبیحہ‘‘ کہا جاتاہے۔ قربانی کو عربی لغت میں ’’اُضحیہ‘‘ کہا جاتاہے، نہ کہ ’’ذبیحہ‘‘، اور ’’اُضحیۃ‘‘ اس مخصوص حیوان کو کہا جاتا ہے، جس کو مسلمان عید الاضحی کے ایام میں ذبح کرتے ہیں۔الدرالمختار میں ہے:  ’’الذبیحۃ اسم ما یذبح۔‘‘                       (الدرالمختار،ج:۶،ص:۲۹۳،ط:سعید) وفی التنویر مع شرحہٖ :  ’’حرم حیوان من شأنہ الذبح مالم یذک ذکائً شرعیًا اختیاریًا کان أو اضطراریًا۔‘‘                                                (ج:۶،ص:۲۹۴،ط:سعید) وفیہ أیضاً : ’’ہی (الأضحیۃ) لغۃً اسم لما یذبح أیام الأضحی۔‘‘         (ج:۶،ص:۳۱۱،ط:سعید)         الجواب صحیح                الجواب صحیح                            کتبہٗ       ابوبکرسعید الرحمن            محمد عبد القادر                          ظہور اللہ                                                                   متخصصِ فقہِ اسلامی                                            جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے