بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

10 ربیع الثانی 1441ھ- 08 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

چوری اور قتل کے ثبوت کے لیے کتوں سے رہنمائی کا حکم

چوری اور قتل کے ثبوت کے لیے کتوں سے رہنمائی کا حکم

 

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
ہمارے علاقہ میں ایک آدمی کو کسی نے قتل کیا اور قاتل کا کوئی پتہ نہ چلا، مقتول کے ورثاء قاتل معلوم کرنے کے لئے سراغ رساں کتا لائے، وہ کتا ایک آدمی کے گھر داخل ہوا اور ورثاء نے اس پر قتل کرنے کا دعویٰ کیا، حالانکہ وہ آدمی اس قتل سے مکمل طور پر انکار کرتا ہے اور کہتاہے کہ: مجھے اس قتل کے بارے میں کوئی معلومات نہیں،اور مقتول کے ورثاء کے پاس اس کے علاوہ کوئی ایک گواہ بھی نہیں ہے۔ اسی طرح چور کو بھی اس کتے کے ذریعے معلوم کرنے کا رواج ہے۔ 
اب پوچھنا یہ ہے کہ آیا اس کتے کی گواہی مقبول ہے؟ ہمارے علاقے کے لوگ اس کی شہادت سے انکار کرتے ہیں۔                      مستفتی:ارشاد اللہ ، بنوں

الجواب حامداً ومصلیاً

واضح رہے کہ کسی کو مجرم ثابت کرنے کے شرعاً دو طریقے ہیں: 
۱:…مجرم خود جرم کا اعتراف کرے۔
۲:…یا شرعی شہادت کے ذریعے جرم ثابت کیا جائے۔
 اس کے علاوہ کسی اور طریقے سے کسی کو مجرم ثابت نہیں کیا جاسکتا، یہاں تک کہ اگر انسانوں کی گواہی میں نصابِ شہادت مکمل نہ ہو تو ایسے انسانوں کی گواہی کا اعتبار بھی نہیں کیا جاسکتا۔بنابریں صورتِ مسئولہ میں کتوں کی نشان دہی کے ذریعے کسی کو قاتل یا چور ثابت کرنا شرعاً معتبر نہیں، کیونکہ شرعی لحاظ سے کتے کی رہنمائی ونشان دہی نہ تو گواہی ہے، نہ ہی انسانی گواہوں کے قائم مقام ہے۔کتوں کی نشان دہی کی بنیاد پر دعویٰ کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ ایسا دعویٰ عدم ثبوت کی بناپر قابل رد ہے۔حدیث شریف میں ہے:
’’عن ابن عباس رضی اللہ عنہ عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم قال: ’’لو یعطی الناس بدعواہم لادعی ناس دماء رجال وأموالہم، ولکن الیمین علی المدعی علیہ‘‘، رواہ مسلم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عن ابن عباس رضی اللہ عنہ مرفوعًا: لکن البینۃ علی المدعی والیمین علی من أنکر۔‘‘             (مشکوۃ المصابیح، باب الاقضیۃ والشہادات، ۳۲۶، ط:قدیمی)
مرقاۃ المفاتیح میں ہے:
’’وقال النووي : ہذا الحدیث قاعدۃ شریفۃ کلیۃ من قواعد أحکام الشرع ففیہ أنہٗ لایقبل قول الإنسان فیما یدعیہ بمجرد دعواہ بل یحتاج إلٰی بینۃ أو تصدیق المدعٰی علیہ‘‘۔           (مرقاۃ المفاتیح، ج:۷،ص:۲۵۰،ط: مکتبہ امدادیہ، ملتان)
فتاویٰ ہندیہ میں ہے:
’’أما أقسام الشہادۃ : فمنہا الشہادۃ علی الزنا وتعتبر فیہا أربعۃ من الرجال، ومنہا الشہادۃ ببقیۃ الحدود والقصاص، تقبل فیہا شہادۃ رجلین ولاتقبل فی ہٰذین القسمین شہادۃ النساء ، ہٰکذا فی الہدایۃ۔‘‘          (فتاویٰ ہندیہ ،کتاب الشہادات، الباب الاول فی تعریفہا، ج: ۳،ص:۴۵۱،ط:رشیدیہ)
  ا لجواب صحیح                الجواب صحیح          الجواب صحیح            الجواب صحیح                                    کتبہ
ابوبکر سعید الرحمن  محمد انعام الحق  محمد شفیق عارف       رفیق احمد                           عزیر محموددین پوری
                                                                                                                                             دارالافتاء جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے